نشانیاں جو آپ کے گردے مدد کے لیے پکار رہے ہیں۔

نشانیاں جو کہ آپ کے گردوں کو مدد کی ضرورت ہے گردے ہمارے جسم کے فلٹر ہیں جب وہ اچھی طرح سے کام نہیں کرتے ہیں تو زہریلے مادے بنتے ہیں جس کی وجہ سے بڑے مسائل پیدا ہوتے ہیں افسوسناک بات یہ ہے کہ 37 ملین سے زیادہ امریکی گردے کی بیماری میں مبتلا ہیں اور صرف 10 فیصد لوگ دائمی گردے کے ساتھ رہ رہے ہیں۔

بیماری جانتے ہیں کہ ان کے پاس ہے یہ جزوی طور پر ہے کیونکہ گردے کی بیماری کی ابتدائی علامات میں سے کچھ کو دوسری حالتوں سے منسوب کیا جاسکتا ہے کہ سب سے زیادہ شدید علامات نسبتاً ترقی یافتہ مراحل میں ظاہر ہوتی ہیں لیکن ایک عقلمند آدمی نے ایک بار کہا تھا کہ ایک اونس کی روک تھام ایک پونڈ علاج کے قابل ہے۔ ہم نشانیوں کا احاطہ کریں گے جن کے بارے میں آپ کے گردے کو مدد کی ضرورت ہے اور کسی بھی مسئلے کو جلد از جلد روکنے کے لیے طریقوں کا احاطہ کریں گے ۔

نمبر ایک۔

تھکاوٹ گردے ہمارے جسم کے تمام زہریلے مادوں کو فلٹر کرتے ہیں لہذا جب وہ صحیح طریقے سے کام نہیں کر رہے ہوتے ہیں تو ہمارے خون میں بہت سی نجاستیں بن سکتی ہیں جس سے ہمیں تھکاوٹ کا احساس ہو سکتا ہے اور چکر آنا اور توجہ مرکوز کرنے سے قاصر ہیں۔ مزید برآں صحت مند گردے erythropoietin پیدا کرتے ہیں جو کہ ایک ہارمون ہے جو جسم میں خون کے سرخ خلیات کی تخلیق میں مدد کرتا ہے سرخ خون کے خلیے ہمارے پورے جسم میں آکسیجن لے جاتے ہیں، خون کے سرخ خلیے جتنے کم ہوتے ہیں ہم اتنے ہی تھکے ہوئے اور نازک ہوتے ہیں، ہم یہ محسوس کریں گے کہ خون کی کمی کا آغاز ہوتا ہے۔

نمبر دو ۔

کمرے میں گرم ہونے کے باوجود سردی محسوس کرنا گردے کی بیماری کا باعث بن سکتا ہے اور خون کی کمی سے آپ کو سردی لگتی ہے چاہے کمرے میں موجود تمام لوگ گرم محسوس کر رہے ہوں یہ گردے کی بیماری کی علامت ہے جس پر بہت آسانی سے توجہ نہیں دی جا سکتی۔ یا بنیادی وجہ کی جانچ کیے بغیر صرف خون کی کمی سے منسوب کیا جائے تو اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ اپنے گردے بھی چیک کرائیں ۔

نمبر تین ۔

ٹھنڈ لگتی ہے تو سانس کی قلت عام طور پر دل یا پھیپھڑوں کی بیماریوں کی وجہ سے ہوتی ہے تاہم سانس کی تکلیف گردے کی بیماری کی وجہ سے ہمارے جسم میں موجود اضافی سیال اور زہریلے مادے بھی ہو سکتے ہیں جنہیں ہمارے گردے فلٹر نہیں کر سکتے پھیپھڑوں میں جمع ہو کر سانس لینے میں دشواری کا باعث بنتے ہیں اس کے علاوہ خون کے سرخ خلیات کی کم تعداد اور خون کی کمی آپ کے جسم کو آکسیجن کی شدید کمی کا باعث بھی بن سکتی ہے۔ لیٹنے والے کیسز آپ کو ڈوبنے کی طرح محسوس کر سکتے ہیں یہ تب ہوتا ہے جب آپ کو فوری طور پر ڈاکٹر کے پاس جانا پڑتا ہے۔

نمبر چار ۔

خشک اور خارش والی جلد ہمارے جسم میں موجود زہریلے مادوں کو فلٹر کرنے اور خون کے سرخ خلیات بنانے میں مدد کرنے کے ساتھ ساتھ ہمارے گردے ہڈیوں کے معدنیات کی مناسب مقدار کو برقرار رکھنے میں بھی مدد کرتے ہیں اس لیے خشک اور خارش والی جلد گردے کے فیل ہونے کی علامت ہو سکتی ہے۔ مزید یہ کہ آپ کے جسم میں معدنی توازن برقرار نہیں رہ سکتا مزید یہ کہ ہمارے خون میں زہریلے مادوں کا جمع ہونا جلد کے ہر طرح کے رد عمل کا سبب بن سکتا ہے اس لیے ان علامات کو نظر انداز نہ کریں ۔

نمبر پانچ ۔

سوجی ہوئی ایڑیاں پاؤں یا ہاتھ کے گردے ٹھیک سے کام نہ کرنا بہت زیادہ سیال کا باعث بنتا ہے۔ اس کے علاوہ جب آپ کے گردے فیل ہو رہے ہوں تو جسم میں بہت زیادہ سوڈیم جمع ہو جائے گا یہ سب ٹانگوں کے ٹخنے پاؤں یا ہاتھ میں سوجن کا باعث بنتا ہے تاہم اعضاء کی سوجن جگر کے دل یا دائمی رگوں کی بیماریوں کی علامت بھی ہو سکتی ہے ۔

نمبر چھ ۔

کو نظر انداز کرتے ہیں جب آپ کے خراب گردے پیشاب میں پروٹین کو خارج ہونے دیتے ہیں تو آپ کی آنکھوں کے گرد سوجن محسوس ہوتی ہے، آپ کو اپنی آنکھوں اور چہرے کے گرد سوجن بھی ہو سکتی ہے اس لیے نہ صرف آپ کے پیروں کے ٹخنے یا ہاتھ سوجے ہوں گے بلکہ آپ کا چہرہ بھی سوجن ہو گا۔ علامات دیگر عوارض کا بھی اشارہ دے سکتی ہیں اس لیے بہتر ہے کہ ڈاکٹر کے پاس جائیں ۔

نمبرسات ۔

سانس کی بدبو اور دھاتی ذائقہ کی وجہ سے گردے کی بیماری میں مبتلا افراد کو شکایت ہو سکتی ہے کہ کھانے کا ذائقہ دھات جیسا ہوتا ہے ان کی سانس بالکل بھی خراب ہو سکتی ہے۔ اس کے علاوہ اس علامت والے لوگوں میں بھوک بھی کم لگ سکتی ہے یہ سب آپ کے خون میں زہریلے مادوں کے جمع ہونے کی وجہ سے ہوتا ہے جسے uremia کہتے ہیں سانس میں بدبو آنے کے بعد متلی اور الٹی ہو سکتی ہے یہاں تک کہ کھانے کے بارے میں سوچنا بھی آپ کو بیمار کر سکتا ہے زیادہ دیر انتظار نہ کریں۔ اس مرحلے میں آپ کو ڈاکٹر سے رجوع کرنے کی ضرورت ہے۔

نمبر آٹھ ۔

پیشاب کے مسائل گردے ہمارے پیشاب کی پیداوار میں ہماری مدد کرتے ہیں بار بار پیشاب کرنے کے بعد درد یا جلن کا احساس ایک مسئلہ ہے مزید یہ کہ اگر آپ کو پیشاب کی مقدار میں کمی نظر آتی ہے تو یہ گردے کے مسئلے کا اشارہ بھی دے سکتا ہے اگر آپ آدھی رات کو اُٹھ کر پیشاب کرنا اکثر گردے کی خرابی کی علامت بھی ہو سکتا ہے اس لیے فوراً ڈاکٹر کے پاس جائیں۔

نمبر نو ۔

جھاگ یا پیشاب میں خون آلود خون جسے ہیماتوریا بھی کہا جاتا ہے گردے کے انفیکشن کی علامت ہو سکتی ہے ٹیومر یا گردے پتھری یا گردے کی خرابی جب گردے صحیح طریقے سے کام نہ کر رہے ہوں تو پیشاب میں خون آ سکتا ہے جس کی وجہ سے پیشاب بھورا سرخ یا جامنی ہو جائے گا خواتین ان علامات کو نظر انداز کر سکتی ہیں اور اسے دیر سے حیض کے ساتھ منسلک کر سکتی ہیں لیکن یہ جھاگ دار پیشاب اچھا نہیں ہے اور نہ ہی رنگین ہو جاتا ہے۔ بلبلوں یا سفید جھاگ کے ساتھ پیشاب پیشاب میں پروٹین کی ایک بڑی مقدار کی نشاندہی کر سکتا ہے ۔

نمبر دس۔

جب گردے فیل ہو رہے ہوتے ہیں تو سونے میں پریشانی ہوتی ہے۔ مناسب طریقے سے فلٹر نہ کرنا اس لیے زہریلے مادے آپ کے خون کے دھارے میں موجود رہتے ہیں جس سے جسم میں ہر طرح کی افراتفری پھیل جاتی ہے جس سے سونے میں دشواری ہوتی ہے اور مناسب آرام کرنا بھی یہ نیند کی کمی کا سبب بن سکتا ہے سلیپ ایپنیا ایک نیند کا عارضہ ہے جس کی وجہ سے آپ سانس روکنا شروع کر دیتے ہیں۔ نیند یہ آپ کو بری طرح سے خراٹے لینے کا سبب بن سکتی ہے اور بعض صورتوں میں یہ رکاوٹ بن سکتی ہے نیند کی کمی ان لوگوں میں بہت عام ہے جو گردوں کی دائمی بیماری میں مبتلا ہیں ۔

شکر یہ۔۔

Spread the love
کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں