خلیفہ دوم حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے واقعات ۔

آپ اپنے دور خلافت میں اس علاقے میں گئے جہاں آج تک بہت زیادہ درخت ہیں چنانچہ آپ اس علاقے میں گئے اور دوپہر کا وقت تھا تو آپ اس درخت کے سائے میں ٹیک لگا کر بیٹھ گئے اور اپنا دم لے رہے تھے۔ وہاں ساری امت کے سردار امیر مری ہیں اور وہ ایک درخت کے نیچے جا رہے ہیں چنانچہ وہ سو گئے اور ایک عرب کی عورت اس علاقے میں تھی اور اس نے تمام لوگوں کے درمیان دیکھا کہ وہ بیٹھی ہوئی نہیں جانتی تھی۔

کہ وہ کون ہے چنانچہ روایت ہے کہ وہ اس کے پاس آئی اس نے اس کے پاؤں چھو کر اسے جگانے کی کوشش کی تو وہ اس عورت کو دیکھتا ہے اور اس نے کہا کہ اللہ جیسے کیا ہو رہا ہے اے اللہ کے بندے تیری کیا ضرورت ہے اور اس نے جواب میں سب سے پہلے یہ کہا کہ میں نے دیکھا ہے کہ میں نے تمہارے چہرے میں کچھ خوبی دیکھی ہے کہ وہ سو رہا ہے اور وہ اب بھی اس کے چہرے میں اچھائی دیکھتی ہے تو وہ کہتی ہے کہ مجھے تم میں کچھ اچھا نظر آتا ہے اور وہ پھر کہتی ہے کہ یہ وہ اہم خاتون ہے جس سے وہ بات کر رہی ہے ہمارے پاس بھیجا ہے وہ باہر سے ہے۔

وہ کہتی ہیں کہ اس نے پچھلے سال ہمارے پاس محمد بن مسلمہ کو بھیجا کہ وہ امیروں سے پیسے لے کر غریبوں کو دے تاکہ وہ زکوٰۃ جمع کر کے اس علاقے کے لوگوں میں تقسیم کر دے اور وہ کہتی ہے کہ اس نے ایسا نہیں کیا۔ وہ جو کہتی ہے مجھے دے دو اور میں ایک عورت ہوں جو یتیموں کی دیکھ بھال کرتی ہے لیکن اس نے مجھے کچھ نہیں دیا اور اس لیے وہ کہتی ہیں کہ ہم تک خبر پہنچی ہے کہ امیر منید ایک بار پھر اسی شخص محمد مسلمہ کو ہمارے علاقے میں جمع کرنے کے لیے بھیج رہا ہے۔ ایک بلی اور اسے دوبارہ دو اور اس لیے مجھے ڈر ہے کہ میں یہ بلی لگاتار دوسری بار نہیں حاصل کروں گا جسے آپ جانتے ہیں تو وہ کہتی ہے کہ یہ وہ جگہ ہے جہاں اس نے شروع میں کہا تھا کہ مجھے تم میں کچھ خوبی نظر آتی ہے وہ کہہ رہی ہے۔

تم میرے ساتھ محمد کے پاس چلو میرے ساتھ اس کے پاس چلو اور چلو اس سے بات کریں تاکہ انشاء اللہ جب وہ آنے والے سال میں آئے گا تو وہ اس بات کو یقینی بنائے گا کہ وہ مجھے چھوڑ کر نہیں جائے گا اس لیے اس کا نوکر لڑکا اس کے ساتھ ہی تھا۔ اس کا نام تھا اور اس نے کہا کہ محمد کے پاس جاؤ اور اسے ہمارے پاس بلاؤ اور اس طرح جس عورت کو وہ چونکا اور اس نے کہا اس طرح میرا ارادہ نہیں تھا میں چاہتا تھا کہ تم میرے ساتھ چلو ہم اس کے پاس جاتے ہیں اگر میں میں احسان مانگ رہا ہوں کہ برا لگتا ہے ۔

اگر میں اسے کہہ رہا ہوں کہ میرے پاس آؤ تو اس نے کہا چلو اکٹھے چلتے ہیں یہ ٹھیک ہے اگر وہ ہمارے پاس نہیں آیا تو ہم اس کے پاس جائیں گے تو یاد محمد کے پاس جاتا ہے اور وہ اسے بتاتا ہے تو بیانیہ کہتا ہے کہ اسے یہ پسند نہیں آیا جیسا کہ اسے معلوم تھا کہ وہ اس وقت دوپہر کے وقت تھا اگر ام آپ کو فون کر رہی ہے تو کسی مسئلے کی وجہ سے کچھ ہو رہا ہے تو وہ کہتا ہے کہ نہیں پسند کیا ہے کیا ہو رہا ہے۔ کیا آپ جانتے ہیں کہ وہ مجھ سے بات کیوں نہیں کرنا چاہتا اور وہ کہتا ہے ارے نہیں سوائے اس کے کہ میں نے دیکھا کہ اس کے ساتھ ایک عورت تھی تو محمد آئے اور وہ امین کو وہیں ڈھونڈتا ہے۔

جہاں وہ درخت کے نیچے تھا اور اس طرح کہتا ہے۔ وہ اسے سلام کے ساتھ سلام کرتا ہے لیکن وہ امیر کہتا ہے اور ہمیں کیا چاہیے اور وہاں عورت کی بات کون سن رہا ہے تو جب اس نے امیر کی بات سنی تو بیانیہ کا مطلب کیا کہتا ہے جیسا کہ آپ جانتے ہیں کہ چلو آپ کسی سے بات کرنے جاتے ہیں آپ کی قمیض کی طرح ہےاور آپ کا بٹن نہیں ہے اور ایسا نہیں ہے کہ جب اسے معلوم ہوا کہ وہ خود امیر کے سامنے ہے تو اس نے جیسے سب کچھ اٹھایا اور ایک قدم پیچھے ہٹ گیا اور پھر عامر کا مطلب محمد سے مخاطب ہو کر کہنے لگا اسلام کیا آپ جانتے ہیں کہ ہم اور آپ کیسے ہیں؟ اسلام سے پہلے ہم بہت کم تعداد میں تھے اور غریب تھے اور ہمارے اردگرد کے تمام عرب ہمارے دشمن تھے وہ کہتا ہے فیصلے میں جلدی نہ کرو بس مجھے ایک موقع دو اور وہ کہتا ہے اور میں نے تمہیں پچھلے سال پیسے جمع کرنے کے لیے بھیجا تھا۔

امیر سے اور غریبوں کو دینے کے لیے اور آپ نے اس عورت کو کچھ نہیں دیا اور پھر وہ کہتا ہے عامر نہیں منی اگر ایسا ہے تو میں آپ کو کچھ بتاؤں کہ یہ جان بوجھ کر نہیں تھا یا تو میں نے اسے یاد کیا میں نے صرف گڑبڑ کی یا شاید وہ اس وقت بھی میرے پاس نہیں آئی تھی جب میں وہاں تھا لیکن یہ جان بوجھ کر نہیں تھا کہ کون اسے بتائے پھر اس سال آنے والے سال میں جب تم وہاں جانے والے ہو تو اس بات کو یقینی بنانا کہ تم نے اسے پچھلے سال کا زگا دیا ہے اور اس سال کی بھی زکوٰۃ اور پھر اس نے عورت سے کہا کہ میں تمہیں بھی کچھ دوں گا کہ اب تم وہاں واپس جاؤ جہاں سے تم آئی ہو تو یہ روایت بہت دلچسپ ہے ۔

لیکن میں اس میں سے ایک دو نکات بتانا چاہتا ہوں اور وہ سب سے پہلے اللہ کی رحمت اور اللہ کی رحمت ہے میرا مطلب یہ ہے کہ یہ عورت اس ملک میں ہے جس میں وہ کسی کو نہیں جانتی تھی اور ان تمام لوگوں سے مدد مانگنے جا سکتی تھی جن سے اللہ نے اسے امیر مطلب تک ہدایت دی اور اللہ کی رحمت نہ صرف اس پر بلکہ یتیموں کا بھی خیال رکھا گیا ہے کہ اب انہیں رحمت اور اطلاع اللہ کی طرف سے خود ام کو فراہم کی جا رہی ہے اب یہ کیوں رحمت ہے کہ وہ جھپکی لینے کی کوشش کر رہا ہے اور اس کی جھپکی پریشان ہوا اور اب اسے اس مسئلے سے نمٹنا ہے آپ جانتے ہیں کہ ایک دن اسے تھوڑا سا زنگ لگ جاتا ہے وہ مومنوں کا قائد ہے اللہ سبحانہ و تعالیٰ نہیں چاہتا تھا کہ قیامت کے دن وہ آئے اور اس سے ملاقات کرے۔

شکایت ہے کہ کسی کو ان کے خلاف ہے تو اللہ تعالیٰ اس عورت کو عمر کے پاس لے آیا جب وہ سو رہا تھا تاکہ وہ اس کے معاملات کی دیکھ بھال کر سکے اور قیامت کے دن یہ ذمہ داری اس کے کندھوں پر نہ ہو، سبحان اللہ اور یہ سوال لے کر آتا ہے کہ جب آپ اور میرے پاس کسی ایسے ضرورت مند کے مسائل پیش کیے گئے ہیں جن کو کسی چیز کی ضرورت ہے جو کچھ مدد طلب کرتا ہے کیا ہم اسے ایک جھنجھلاہٹ کے طور پر دیکھتے ہیں یا ایک مومن کی روح کے طور پر دیکھتے ہیں جب یہ مواقع آتے ہیں تو ہم انہیں کیسے دیکھتے ہیں؟ جھنجھلاہٹ ایک تھکاوٹ کے طور پر ایک مسئلہ جو ہمیں پریشان کرتا ہے یا یہ ایک موقع ہے، وہ ایک ایسے آدمی تھے جو اپنی ذمہ داری کو بہت سنجیدگی سے لیتے تھے جب وہ رات کے وقت گشت کرتے تھے اور وہ آدھی رات کو مدینہ منورہ کے ارد گرد گھومتے پھرتے کسی کو تلاش کرتے تھے۔

ضرورت مند ہے تو ایک دفعہ وہ چل رہا تھا اور اس نے ایک آدمی کو دیکھا جو ایک خیمے کے باہر کھڑا ہے اور اس نے اندر سے ایک عورت کی چیخ سنی تو وہ اس کے پاس چلا گیا اور تم جانتے ہو کہ اس نے رونا سن لیا تو وہ اس کے پاس گیا اور اس نے پایا۔ وہ اور وہ کہتا ہے کہ کیا ہو رہا ہے اور وہ کہتا ہے کہ میری بیوی بچے کو جنم دینے والی ہے وہ درد زہ میں ہے اور اس کی مدد کرنے والا کوئی نہیں ہے تو میں فوراً اپنی بیوی ام کے پاس چلا گیا اور تم جانتے ہو کہ تم کیا جانتے ہو کہ اس کے الفاظ بہت دلچسپ ہیں۔ اس سے مخاطب ہوتا تھا کہتا تھا کہ کیا تم کچھ لینا پسند کرو گے جو اللہ تمہارے دروازے پر لایا ہے اللہ تمہارے لیے آنے کا موقع لے کر آیا ہے اور وہ کہتی ہے کہ کیا ہو رہا ہے اور وہ اسے سمجھاتا ہے اور وہ کہتا ہے ہاں جب تک وہ نہیں جاتی اور وہ ڈیلیور کرنے میں مدد کرتی ہے۔

بچے نے کچھ کھانا بھی لے لیا جب وہ ان کے لیے کھانا پکانے کے لیے نکلا تو وہ کھانا پکا رہا تھا جب اس کی بیوی اس آدمی کے بچے کو پیدا کرنے میں مدد کر رہی تھی اور ام خیمے سے باہر آ کر کہتی ہے کہ اپنے دوست سے کہو کہ تم جانتے ہو کہ اس کی بیوی نے دیا ہے۔ پیدائش لیکن وہ کہتا ہے کہ عامر یعنی اپنے دوست کو بتاؤ کہ آدمی نہیں جانتا تھا کہ یہ صحیح ہے اور اس لیے جب اسے معلوم ہوا کہ وہ صدمے کے خلاف ہے لیکن نقطہ یہ ہے کہ اللہ نے جو موقع آپ کی دہلیز پر پہنچا دیا ہے کیا آپ اس سے فائدہ اٹھانا چاہتے ہیں؟

اس لیے بھائیوں اور بہنوں اللہ تعالیٰ ہمیں زندگی بھر کے مواقع پیش کرتا ہے چھوٹی چھوٹی چیزیں بڑی چیزیں جنہیں ہم یا تو اپنے نقطہ نظر سے دیکھ سکتے ہیں واقعی یہ بتاتا ہے کہ ہم کس طرح کا ردعمل ظاہر کرتے ہیں کیا ہم اسے ایک موقع اور موقع کے طور پر دیکھتے ہیں کہ شاید اللہ کرے ہمیں قیامت کے دن کوئی ذمہ داری اٹھانے سے روک دے کہ ہم اپنے درجات بلند کریں اور ہمارے گناہ معاف ہو جائیں آپ کی مدد سے جب تک دوسروں کی مزاحمت ہو یا ہم اسے جھنجھلاہٹ یا تھکاوٹ کے طور پر دیکھیں ہم بہت کچھ مانگتے ہیں۔ ہمیں ان لوگوں میں شامل کرنے کی توفیق عطا فرما جو ہمیں ہیں اور ہم لوگوں کے لیے اور آپ کے آس پاس کے لوگوں کے لیے سب سے زیادہ فائدہ مند ہیں۔

Spread the love

اپنا تبصرہ بھیجیں