اسلام میں 10 بدترین حرام چیزیں۔

اسلام ایک ایسا مذہب ہے جو اپنے پیروکاروں کے درمیان روحانی پاکیزگی اور راست روی کو یقینی بنانے کے لیے مذہبی زندگی پر بہت زیادہ زور دیتا ہے اسلام میں بعض سرگرمیوں اور طرز عمل کو حرام سمجھا جاتا ہے جس کا مطلب ہے حرام یا ممنوع یہ یقینی بنانا ہے کہ مسلمان اپنی زندگی اللہ کی تعلیمات کے مطابق گزاریں اور ایسے اعمال سے اجتناب کریں۔ اپنے اور دوسروں کے لیے نقصان دہ ہو سکتا ہے ۔

نمبر ایک۔
ایک بت پرستی بتوں کی پوجا کرنا یا عبادت میں شراکت داروں کے ساتھ کسی بھی قسم کی وابستگی کو اسلام میں ایک سنگین گناہ سمجھا جاتا ہے مسلمانوں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ صرف اللہ کی عبادت کریں اور مشغولیت سے پرہیز کریں تم اللہ کے سوا صرف بتوں کی عبادت کرتے ہو اور تم ایک جھوٹی بات پیش کرتے ہو، بیشک تم اللہ کے سوا جن کی عبادت کرتے ہو وہ تمہارے لیے رزق کی طاقت نہیں رکھتے، لہٰذا اللہ سے رزق تلاش کرو اور اس کی عبادت کرو اور اس کا شکر ادا کرو، تمہیں لوٹا دیا جائے گا

نمبر دو۔
نشہ آور اشیاء اسلام میں ایک اور اہم ممانعت کسی بھی قسم کی نشہ آور اشیاء کا استعمال ہے جس میں الکحل منشیات یا دماغ کو تبدیل کرنے والی دیگر اشیاء شامل ہیں، مسلمانوں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ ایسی کسی بھی نشہ آور چیز کے استعمال سے پرہیز کریں کیونکہ اسلام میں اسے گناہ کبیرہ سمجھا جاتا ہے، اس کی وجہ یہ ہے کہ یہ چیزیں جسم کے دماغ اور روح کے لیے نقصان دہ ہیں جو صحت کو نقصان پہنچانے کا باعث بنتے ہیں غیر قانونی سرگرمیاں اور اللہ کی تعلیمات سے دور ہو جاتے ہیں۔

اے ایمان والو تم نشے کی حالت میں نماز کے قریب نہ جاؤ جب تک کہ آپ کو معلوم نہ ہو کہ آپ کیا کہہ رہے ہیں یا جنیوا کی حالت میں وہ لوگ جو نماز کی جگہ سے گزرتے ہیں یہاں تک کہ تم اپنا سارا بدن دھو لو اور اگر تم بیمار ہو یا سفر میں ہو یا تم میں سے کوئی قضائے حاجت کی جگہ پر آئے یا تم نے عورتوں سے رابطہ کیا ہو اور پانی نہ ملے تو صاف زمین تلاش کرو اور اس پر مسح کرو۔ آپ کے چہرے اور آپ کے ہاتھ اس کے ساتھ درحقیقت اتحادی ہمیشہ معافی اور معاف کرنے والے

نمبر تین۔
جوئے جس میں کسی بھی قسم کی شرط یا موقع کا کھیل شامل ہے اسلام میں ممنوع ہے مسلمانوں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ شرط لگانے یا کسی بھی قسم کی سرگرمی میں ملوث ہونے سے باز رہیں جس میں تبادلے شامل ہوں۔ انعام جیتنے کے موقع کے لیے رقم یہ اس لیے ہے کہ جوا سخت محنت اور حلال طریقے سے روزی کمانے کے اصولوں کے خلاف ہے جس کی اسلام میں بہت زیادہ قدر ہے اوہ مومنو نشہ آور جوا بتوں کو کھیلنا اور بہت سارے فیصلے ڈرانا یہ سب شیطان کی کارستانی ہے۔ ان سے پرہیز کریں تاکہ آپ کامیاب ہو جائیں ۔

نمبر چار۔
زنا بالجبر کو اسلام میں ایک اہم گناہ سمجھا جاتا ہے مسلمانوں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ شادی سے باہر جنسی سرگرمیوں میں ملوث ہونے سے گریز کریں جسے مذہب میں ایک مقدس اور حلال اتحاد سمجھا جاتا ہے زنا کو حرمت کی خلاف ورزی سمجھا جاتا ہے۔ شادی اور اخلاقی اور اخلاقی زندگی کے اصول کے خلاف جاتی ہے اور غیر قانونی جنسی تعلقات کے قریب نہ جانا بے شک یہ ایک بد اخلاقی ہے اور ایک طریقہ کے طور پر برائی ہے اور اسے ایک سنگین گناہ سمجھا جاتا ہے اور قرآن نے اسے ہوس کی خواہش سے تعبیر کیا ہے اور اسے فطری حکم کے خلاف سمجھا جاتا ہے ممتاز مسلم اسکالر شیخ یوسف القرضاوی کہتے ہیں کہ معاشرے میں اس فرسودہ عمل کے پھیلاؤ کے بعد اس کے فطری طرز زندگی میں خلل پڑتا ہے ۔

اور اس پر عمل کرنے والوں کو اپنی ہوس کا غلام بنا کر انہیں مہذب ذوق مہذب اخلاق سے محروم کر کے مہذب انداز میں زندگی گزارنے کے لیے حضرت لوط علیہ السلام کی قوم کا قصہ جیسا کہ قرآن مجید میں بیان کیا گیا ہے ہمارے لیے کافی ہونا چاہیے کہ لوٹ مار کے عادی تھے۔ اس بے شرمی کی وجہ سے اس غیر فطری اور ناجائز عمل کی پیروی میں عورتوں سے فطری پاکیزہ حلال تعلقات کو ترک کرنا اسی لیے ان کے نبی لوط علیہ السلام نے ان سے فرمایا کہ تم تمام مخلوقات میں سے کس چیز سے مردوں کے پاس جاتے ہو اور ان بیویوں کو چھوڑ دیتے ہو جنہیں تمہارے رب نے پیدا کیا ہے۔ آپ کے لیے درحقیقت آپ لوگ تمام حدود سے تجاوز کر رہے ہیں۔

نمبر پانچ۔
سود یا سود اسلام میں سختی سے ممنوع ہے سود یا سود پر مشتمل کسی بھی لین دین کو حرام سمجھا جاتا ہے کیونکہ یہ منصفانہ تجارت اور منافع کی تقسیم کے اصولوں کے منافی ہے اسلام اس تجارت اور تجارت کی ترغیب دیتا ہے جس پر مبنی ہے۔ دونوں فریقوں کے لیے باہمی فائدے اور انصاف پر 7. گپ شپ اور غیبت کرنا اسلام میں گناہ اور بہتان سمجھا جاتا ہے مسلمانوں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ دوسروں کی پیٹھ پیچھے بات کرنے یا ایسی افواہیں پھیلانے سے گریز کریں جو دوسروں کے لیے نقصان دہ ہو قرآن افواہیں پھیلانے یا مشغول ہونے سے سختی سے منع کرتا ہے۔

کسی بھی قسم کے رویے میں جو کسی دوسرے شخص کے کردار کو بدنام کرنے کا باعث بن سکتا ہے اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید میں اس کا تقابل حیوانیت کے مکروہ فعل سے کر کے منع فرمایا ہے اے ایمان والو بہت سے منفی مفروضوں سے پرہیز کرو بے شک کچھ گمان گناہ ہے اور ہر ایک کی جاسوسی یا غیبت نہ کرو۔ کیا تم میں سے کوئی اپنے مردہ بھائی کا گوشت کھانا پسند کرے گا تو تم اس سے نفرت کرو گے تو غیبت سے نفرت کرو اور اللہ سے ڈرو بے شک اللہ توبہ قبول کرنے والا اور رحم کرنے والا ہے۔

نمبر چھ۔
چوری یا کوئی بھی دھوکہ دہی جس میں کوئی ایسی حرام چیز ہو جو کسی اور کی ہو سختی سے سخت ہے۔ اسلام میں ممنوع مسلمانوں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ دوسروں کی املاک اور سامان کا احترام کریں اور کسی بھی ایسے عمل سے گریز کریں جس کے نتیجے میں کسی دوسرے شخص کی املاک کو نقصان پہنچے۔ اسلام میں انسانی جان کی حرمت کی سختی سے ممانعت کی گئی ہے اور ہر انسان سے ہمیشہ یہ توقع کی جاتی ہے کہ وہ انسانی جان کی حفاظت کرے گا جو شخص کسی جان کو قتل کرتا ہے سوائے اس کے کہ کسی جان کے لیے یا زمین میں فساد پھیلانے کے لیے گویا اس نے پوری انسانیت کو قتل کر دیا ہو ایک کو بچانا گویا اس نے بنی نوع انسان کو مکمل طور پر بچا لیا ۔

نمبر سات۔
سور کا گوشت کھانے سے مسلمانوں کو خنزیر کا گوشت کھانے سے منع کیا گیا ہے کیونکہ اسے ناپاک سمجھا جاتا ہے اس کا ذکر قرآن میں ہے اور اسلام کے پیروکاروں کے درمیان ایک اہم ممنوع سمجھا جاتا ہے جس سے اسے صرف منع کیا گیا ہے۔ تم مردہ جانوروں کا خون کرتے ہو سور کا گوشت اور جو اللہ کے سوا دوسروں کے لیے وقف کیا گیا ہو لیکن جو شخص ضرورت سے مجبور ہو نہ اس کی خواہش کرے اور نہ ہی اس کی حد سے تجاوز کرے اس پر کوئی گناہ نہیں بے شک جھوٹ معاف کرنے والا اور رحم کرنے والا ہے۔

یہ 7 حرام اعمال ہیں۔ یہ نوٹ کرنا ضروری ہے کہ جب یہ چیزیں اسلام میں حرام سمجھی جاتی ہے ہمارا مذہب بھی معافی اور نجات پر زور دیتا ہے اور لوگوں کو اپنی اصلاح اور اخلاقی بہتری کے لیے کوشش کرنے کی ترغیب دیتا ہے لیکن جو کوئی اپنے گناہوں کے بعد توبہ کرتا ہے اور اپنی اصلاح کرتا ہے تو اللہ یقیناً معاف کرے گا ۔
یقیناً اللہ سب کو بخشنے والا مہربان ہے۔ ۔

Spread the love

اپنا تبصرہ بھیجیں