اگر آپ رزق اور دولت میں مالی طور پر امیر بننا چاہتے ہیں تو یہ کریں۔

تو ہم دولت اور رزق کیسے کما سکیں گے ۔میرے بھائی اور بہنیں اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ کو تکلیف ہونے کی وجہ یہ ہے کہ آپ نے کسی اور کو تکلیف دی ہے میرے بھائیو اور بہنو ہر کوئی جاننا چاہتا ہے کہ کسی اور کے پاس کتنا پیسہ ہے یا دوسروں کے پاس لوگوں کو یہ جاننے میں اتنی دلچسپی ہوتی ہے کہ دوسرے کس طرح اپنا پیسہ کما رہے ہیں ان کے پاس اتنا کیوں ہے وغیرہ وغیرہ اگر ان کے پاس زیادہ تر لوگ سمجھتے ہیں کہ دوسروں کے پاس اس سے زیادہ پیسہ ہے۔

اصل میں ان کے پاس ہے لیکن بہرحال اس سے زیادہ دلچسپی کی بات یہ ہے کہ لوگ اپنے لیے پیسہ چاہتے ہیں اب یہ سب پیسے کے بارے میں کیا ہے اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ انسان کے لیے آزمائش کے طور پر بعض چیزوں کو مزین کیا گیا ہے اس لیے پیسہ ان میں سے ایک دولت ہے چاہے کتنی ہی کیوں نہ ہو۔ بنی نوع انسان ہمیشہ سے زیادہ کی خواہش کرے گا لیکن کیا آپ جانتے ہیں کہ ہمیں کیا سکھایا جاتا ہے کہ دولت رکھنے کا کوئی فائدہ نہیں ہے جو دولت کو برکت کے بغیر حاصل کرے جو کہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے عذاب ہے ۔

جب آپ کے پاس آتا ہے تو اس کا کوئی فائدہ نہیں ہوتا اللہ تعالیٰ سے آپ کا تعلق ختم ہو جانا یا خوشی نہ ہونا کوئی قناعت نہیں اچھی صحت کی ہمیں اتنی ضرورت ہے کہ ہم زندہ رہ سکیں شاید نسبتاً آرام دہ زندگی گزار سکیں اسی دولت کو استعمال کرتے ہوئے دوسروں تک پہنچ سکیں اور ساتھ ہی اللہ تعالیٰ کی وہ نعمتیں بھی حاصل کریں جو ہم چاہتے ہیں۔ نیکی خوشی قناعت جو بھی ہو اور پیارے گھر والے ہمیں ایک خوبصورت آرام دہ گھر چاہیے جہاں ہم پہلے ہی گھر واپس جانے کا سوچتے ہیں دل کو سکون ملتا ہے نہ کہ ایسا گھر جہاں آپ اس کے بارے میں سوچتے ہیں اور آپ کہیں قریب یا جلد از جلد جانا بھی نہیں چاہتے۔

تم بالکل پریشان ہو یہ گھر نہیں ہے جو شاید اللہ کی طرف سے عذاب ہو شاید یہ نعمتوں کا چھیننا ہے کم از کم یہ کہنا کہ ہمیں نعمتیں کمانے کے لیے اس کے بارے میں کچھ کرنے کی ضرورت ہے تو ہم کیسے کما سکیں گے۔ دولت اور رزق اور اس کے ساتھ ساتھ اس بات کو یقینی بنائیں کہ یہ اللہ تعالیٰ کی برکتوں کے ساتھ آرہا ہے یہاں پر پوائنٹ نمبر ایک آپ کی پانچوں نمازیں چاہے کچھ بھی ہوں اگر آپ نے روزانہ کی بنیاد پر ان پانچوں نمازوں کو پورا کیا ہے تو آپ کو یقین ہے کہ دولت آپ کو حاصل ہے”۔

دوبارہ حاصل کرنے والا نعمتوں اور بھلائیوں سے اس شرط پر بھر جائے گا کہ آپ نے کچھ دوسری چیزوں کا بھی خیال رکھا ہے لیکن یہ نقطہ آغاز میں سے ایک ہے اس کے بغیر اس بات کا کوئی امکان نہیں ہے کہ آپ کے مال میں برکت ہو گی۔ اور درحقیقت اللہ تعالیٰ سورۃ طٰہٰ میں اس خوبصورت آیت کے بارے میں بتاتے ہیں کہ آخر میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ آپ کے گھر والوں یا آپ کے رشتہ داروں کو مارا آپ کو معلوم ہے کہ آپ کے گھر والے اپنے گھر والوں کو نماز ادا کرنے کی تلقین کریں اور اس پر صبر کریں۔

نماز کے پورا ہونے پر اور اپنے گھر والوں کو ایک خوبصورت انداز میں یاد دہانی کروانے پر جب آپ کے والد آپ کی والدہ آپ کے بھائی آپ کی بہنیں یہاں تک کہ آپ کے بچے آپ کو نماز کی یاد دلاتے تھے تو آپ پریشان نہ ہوں یہ اللہ تعالی کی طرف سے ہے وہ بتائیں گے۔ آپ نماز پڑھ لیں یا فجر کا وقت ہو گیا ہے اور اسی طرح آپ کو معلوم ہے کہ آؤ آپ کی نماز میں دیر ہو رہی ہے اور اسی طرح یہ وہ مبارک کلمات ہیں جو اللہ تعالیٰ کی طرف سے آپ کے کانوں میں بھیجے گئے ہیں وہ فرشتوں کے ذریعہ درج ہیں اور آپ کا رد عمل ظاہر ہو گا۔

سب ہوشیار رہیں آئیے کوشش کریں اور صحیح رد عمل کا اظہار کریں ایسا ہی ہے کہ جب پکارنے والا نماز کے لیے پکارتا ہے تو وہ کہتا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے اسے محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے مبارک لبوں سے ہدایت کی ہے کہ وہ لوگوں کو پکاریں کہ نماز کے لیے آؤ ان کی کامیابی کے لیے آؤ۔ دو ہاتھ ملا کر نماز کے لیے آؤ کامیابی کی طرف آؤ یہ دہرایا گیا ہے کہ دن میں کتنی بار ہمارے لیے پانچ نمازیں ہیں ہر نماز کے لیے چار بار دہرائی جاتی ہے ۔

تو چار بار سنتے ہو نماز کے لیے آؤ اور چار بار سنتے ہو اب کامیابی کی طرف آ جاؤ میرے بھائیو میری بہنوں کو ضرب لگتی ہے کہ دن میں 5 20 بار آپ سے کہا جا رہا ہے کہ نماز کے لیے آؤ کامیابی کے لیے آپ نے سنا ہے اگر آپ نے سنا ہے تو آپ کا ردعمل بھی ریکارڈ کیا گیا ہے سبحان اللہ اب اگر آپ نماز پڑھنا چاہتے ہیں تو دیکھیں اللہ کیا فرماتا ہے نماز پر صبر کریں ثابت قدم رہیں اس بات کو یقینی بنائیں کہ صبح اٹھنا آسان نہیں ہے ایک وقت ایسا آئے گا جب آپ اسے تھوڑی دیر کے لیے کریں گے کہ آپ اس وقت جاگ رہے ہوں گے۔

جب آپ کو نماز پڑھنے کا احساس ہو جائے اور روئیں اللہ تعالیٰ اپنے آپ کو دھوئے اور اللہ رب العزت کے لیے سجدہ ریز ہو جائے جب آپ کو نماز کی یاد دلائی جائے تو سستی نہ کریں، فیس نہ کریں، پریشان نہ ہوں کیونکہ یہی حقیقی کامیابی ہے یہاں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ ہم آپ سے ہمیں رزق دینے کے لیے نہیں مانگ رہے ہیں اور نہ ہی ہم رزق کے لیے۔ تم سے رزق نہیں مانگ رہے ہم اصل میں تمہیں پالیں گے ہم تمہیں رزق دیں گے ہم تمہیں رزق دیں گے تمہیں کیا چاہیے تمہیں دولت چاہیے تمہیں اتنا زیادہ چاہیے تم اپنی خوشی تمہاری خوشی چاہو اور جو کچھ بھی ہو ہم تمہیں دیں گے۔

جس کے نتیجے میں آپ نماز پر صبر کرتے ہیں اور اپنے گھر والوں کو نماز کی تلقین کرتے ہیں تو جب آپ اس خوبصورت ہدایت کی وجہ سے ایک دوسرے کو نماز پڑھنے کو کہیں گے تو آپ پہلے ہی رزق میں برکت حاصل کر رہے ہوں گے جو کہ حیرت انگیز ہے جو کہ حیرت انگیز ہے اور اگر آپ ایسا نہیں کرتے ہیں ایک دوسرے کو نماز کی یاد دلائیں اور آپ ایک ہی گھر میں رہ رہے ہیں اللہ سبحانہ وتعالیٰ سے مزید نعمتوں کی امید نہ رکھیں حالانکہ وہ ہمیں دیتا ہے بعض اوقات یہ کوئی نعمت نہیں ہوتی کہ لوگوں کو دولت مل جاتی ہے جو ان کی آخری تباہی کا ذریعہ بنتی ہے۔

ماضی میں قرآن نے اس کی بہت سی مثالیں دی ہیں ۔
لہذا ہمیں محتاط رہنے کی ضرورت ہے میرے بھائیوں میری بہنوں جو کہ پوائنٹ نمبر ایک دن میں پانچ وقت کی نماز ہے دوسری چیز جس کی آپ کو ضرورت ہے اگر آپ رزق اور برکت کے لحاظ سے بہت کچھ حاصل کرنا چاہتے ہیں اور اور ڈھیروں قناعت اور نیکی اور خوشی اور دولت میں بھی کئی گنا اضافہ آپ کو یقینی بنانا چاہیے کہ آپ روزانہ کی بنیاد پر اللہ سے معافی مانگیں وہ اپنی قوم کو حضرت نوح علیہ السلام سے کہتا ہے کہ اپنے رب سے معافی مانگو بیشک وہ بڑا بخشنے والا ہے۔

معاف کرنے پر وہ آسمان سے فائدہ مند بادشاہت بھیجے گا یعنی آسمان سے تم پر نفع بخش بارش برسائے گا وہ تمہیں سبحان اللہ بہت ساری دولت سے نوازے گا جس کے نتیجے میں تم معافی مانگنے والے کو اسی صفحہ پر آ جانا جانتے ہو جس نے تمہیں استغفار کرنے والا بنایا تھا آپ کو بہت ساری دولت اور ڈھیروں اولادیں عطا فرمائے آپ کے خاندان میں برکتیں آپ کے مال میں برکتیں آپ کے مال میں کیا کر کے اللہ تعالی سے استغفار کریں تو آپ کی دعا ہے اور آپ کو ایک دوسرے کو دعا کی تلقین ہے اور پھر آپ کو طلب کرنا ہے۔

اللہ تعالی کی معافی اور اس بات کو یقینی بنانا کہ آپ اپنے طریقوں اور عادات کو درست کریں جب آپ کو اپنے کیے پر واقعی پچھتاوا نہیں ہے یا آپ نے دعا نہیں کی ہے یا آپ کو صحیح کام کرنے میں دلچسپی نہیں ہے تو معافی مانگنے کا کیا فائدہ ہے۔ لیکن اگر آپ روزانہ کی بنیاد پر ان گناہوں کے لیے درست طریقے سے معافی مانگتے ہیں جن کے بارے میں آپ جانتے ہیں کہ آپ نے ان لوگوں کے لیے کیے ہیں جو نہیں جانتے کہ آپ نے ان لوگوں کے لیے کیے ہیں جنہیں یہ احساس بھی نہیں ہوتا کہ آپ نے کبھی کبھار کیا ہے تو یہ ایک معمولی سی بات تھی لیکن بڑے گناہوں کے طور پر۔

خیر ہم اللہ سے انفرادی طور پر گناہوں کی معافی مانگتے ہیں اور اجتماعی طور پر بھی اللہ تعالیٰ ہمیں نیکی اور بخشش عطا فرمائے اور آخری نکتہ جس کا میں ذکر کرنا چاہتا ہوں اگر آپ برکات اور برکتیں چاہتے ہیں تو میرے بھائیوں اور بہنوں کو اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ کے کردار اور اخلاق کو یقینی بنائیں۔ کمال ہے کسی کی روح کو تکلیف نہ دو کسی پر تہمت مت لگائیں ان پر الزام نہ لگائیں ۔

ان کے بارے میں بھیک نہ مانگیں ان کے بارے میں کاٹیں ان کو اس طرح تکلیف نہ دیں کہ سبحان اللہ یہ آپ کے پاس برائی لے کر آئے کیونکہ اسی کو ہم انسانوں کا حق کہتے ہیں اور اللہ بہت جلد ہے اللہ کسی ایسے شخص سے بدلہ لینے میں بہت جلد ہے جس نے اپنے قریبی لوگوں کو تکلیف پہنچائی ہو سبحان اللہ اس لیے آپ اس سے دور رہنے کی بجائے لوگوں کے ساتھ احترام کے ساتھ پیش آئیں اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ اچھے الفاظ کا استعمال کریں اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ غیبت سے دور رہیں غیبت اپنے بھائی یا بہن کے پیچھے ایسی بری باتیں کہنا ہے جو سچ ہو کہ اگر وہ سنیں تو وہ ناراض ہو جائیں ۔

سبحان اللہ کیا آپ نے کبھی محسوس کیا ہے کہ اگر یہ سچ نہیں تھا تو اسے بھوٹان کہتے ہیں یہ بہتان ہے جو اس سے بھی بدتر ہے یہ بڑے بڑے بیٹے ہیں سبحان اللہ ہم اللہ تعالیٰ سے دعا کریں کہ وہ ہمیں معاف کر دے تاکہ آپ کو کوئی برکت یا برکت حاصل نہ ہو اگر آپ دوسروں کو گالی دیتے ہیں تو دوسروں پر ان کی غیبت کرتے ہیں ان کی غیبت کرتے ہیں انہیں دھوکہ دیتے ہیں ان سے چوری کرتے ہیں اور آپ کو اس کے علاوہ جو کچھ بہتر کرنے کی ضرورت ہے ۔

اس سے ایک طرف آپ کی دعا ہے بہتری آئی ہے آپ معافی مانگ رہے ہیں اور دوسروں کے ساتھ آپ کے تعلقات میں بہتری کی ضرورت ہے کہ کس طرح ہر بار یہ تین یا ان میں سے چند نکات سامنے آتے رہتے ہیں کیونکہ یہی زندگی کا نچوڑ ہے صرف اللہ کی عبادت کریں اور باقی سب کے ساتھ انتہائی احترام کے ساتھ پیش آنا یاد رکھیں ۔

بہت سے لوگ تکلیف میں ہیں بہت سے لوگ اپنے خاندان میں اپنی دولت میں اپنی صحت میں اپنی قناعت کے ساتھ جدوجہد کر رہے ہیں وہ نہیں سمجھتے کہ آپ کو تکلیف ہونے کی وجہ یہ ہے کہ آپ نے کسی اور کو تکلیف پہنچائی ہے بس اللہ تعالیٰ ہماری مغفرت فرمائے ۔ ۔۔

Spread the love

اپنا تبصرہ بھیجیں