جانیے پاکستان میں بجلی کی بلند قیمت کی وجہ

پاکستان میں بجلی کی مہنگی قیمت کو کئی عوامل سے منسوب کیا جا سکتا ہے۔ یہاں کچھ اہم وجوہات ہیں:

1. سبسڈیز اور حکومتی مداخلت:
بجلی کی کم قیمت:
حکومت پاکستان صارفین کو بجلی کے بلند نرخوں کے بوجھ کو کم کرنے کے لیے سبسڈی فراہم کرتی ہے۔ جبکہ سبسڈیز کا مقصد سستی کو سہارا دینا ہے، وہ بجلی کی قیمت کم کرنے، نجی سرمایہ کاری کی حوصلہ شکنی اور بنیادی ڈھانچے کی ترقی اور دیکھ بھال کے لیے دستیاب فنڈز کو کم کرنے کا باعث بن سکتے ہیں۔
مالی چیلنجز:
حکومت کی طرف سے فراہم کردہ سبسڈیز مالیاتی دباؤ پیدا کرتی ہیں، کیونکہ ان کے لیے بجٹ کے وسائل کی ایک اہم مختص کی ضرورت ہوتی ہے۔ بجلی پر سبسڈی دینے کا بوجھ حکومت پر پڑتا ہے، جو پاور سیکٹر میں سرمایہ کاری کرنے اور انفراسٹرکچر کی کمی کو مؤثر طریقے سے دور کرنے کی اپنی صلاحیت کو محدود کر سکتی ہے۔

2. لاگت کی وصولی کے چیلنجز:
بجلی کی چوری اور عدم ادائیگی:
پاکستان کو بجلی کی چوری سے متعلق چیلنجز کا سامنا ہے، جہاں صارفین اپنے بلوں کی ادائیگی سے بچنے کے لیے غیر قانونی طور پر بجلی کی سپلائی میں ٹیپ کرتے ہیں یا میٹر کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کرتے ہیں۔ صارفین کی جانب سے عدم ادائیگی بھی محصولات میں کمی کا باعث بنتی ہے۔ یہ مسائل تقسیم کار کمپنیوں کی بجلی کی پوری قیمت وصول کرنے اور مالی طور پر پائیدار پاور سیکٹر کو برقرار رکھنے کی صلاحیت کو محدود کرتے ہیں۔

.3غیر موثر توانائی کا بنیادی ڈھانچہ:
پرانے پاور پلانٹس:
پاکستان میں بہت سے پاور پلانٹس پرانے ہیں اور جدید پلانٹس کے مقابلے میں کم کارکردگی کی سطح پر کام کرتے ہیں۔ یہ پرانے پلانٹ پیدا ہونے والی بجلی کے فی یونٹ زیادہ ایندھن استعمال کرتے ہیں، جس سے لاگت میں اضافہ ہوتا ہے۔
ترسیل اور تقسیم کے نقصانات:
پاکستان کی ترسیل اور تقسیم کا بنیادی ڈھانچہ بہت زیادہ نقصانات کا شکار ہے۔ یہ نقصانات پاور پلانٹس سے ڈسٹری بیوشن نیٹ ورکس تک اور خود ڈسٹری بیوشن نیٹ ورکس میں بجلی کی ترسیل کے دوران ہوتے ہیں۔ نقصانات تکنیکی عوامل کی وجہ سے ہوسکتے ہیں جیسے آلات کی ناقص دیکھ بھال، پرانا انفراسٹرکچر، اور چوری۔ نقصانات جتنے زیادہ ہوں گے، اتنی ہی زیادہ بجلی پیدا کرنے کی ضرورت ہوگی، لاگت میں اضافہ ہوگا۔
لائن لاسز اور چوری:
پاکستان میں غیر قانونی کنکشن اور میٹر سے چھیڑ چھاڑ سمیت بجلی کی چوری عام ہے۔ یہ طرز عمل سسٹم میں مجموعی نقصانات میں حصہ ڈالتے ہیں، اور اس کا بوجھ جائز صارفین پر پڑتا ہے جو نقصانات کی تلافی کے لیے زیادہ ٹیرف ادا کرتے ہیں۔

.4جیواشم ایندھن پر انحصار:
درآمدی ایندھن کی قیمتیں:
پاکستان بجلی کی پیداوار کے لیے درآمد شدہ تیل اور قدرتی گیس پر بہت زیادہ انحصار کرتا ہے۔ عالمی سطح پر تیل کی قیمتوں میں اتار چڑھاؤ کا براہ راست اثر بجلی کی پیداواری لاگت پر پڑتا ہے۔ جب تیل کی قیمتیں بڑھ جاتی ہیں، تو بجلی پیدا کرنا زیادہ مہنگا ہو جاتا ہے، جس سے صارفین کے لیے ٹیرف زیادہ ہو جاتا ہے۔
محدود گھریلو پیداوار:
پاکستان کی قدرتی گیس کی مقامی پیداوار بجلی کی پیداوار کی طلب کو پورا کرنے کے لیے ناکافی ہے۔ نتیجے کے طور پر، پاکستان کو زیادہ قیمتوں پر مائع قدرتی گیس (LNG) درآمد کرنا پڑتی ہے، جس سے بجلی کی پیداوار کے مجموعی اخراجات میں اضافہ ہوتا ہے۔

.5گردشی قرضہ:
غیر ادا شدہ بل اور بقایا ادائیگیاں:
گردشی قرض سے مراد توانائی کے شعبے کے اندر ادا نہ کیے گئے بلوں اور بقایا ادائیگیوں کا جمع ہونا ہے۔ یہ اس وقت ہوتا ہے جب بجلی پیدا کرنے والی کمپنیاں تقسیم کار کمپنیوں کی جانب سے بروقت ادائیگیاں وصول نہیں کرتی ہیں یا جب صارفین اپنے بل ادا کرنے میں ناکام رہتے ہیں۔ یہ مالیاتی تناؤ توانائی کی سپلائی چین میں خلل ڈالتا ہے، انفراسٹرکچر اپ گریڈ میں سرمایہ کاری کو محدود کرتا ہے، اور قرض کو پورا کرنے کے لیے بجلی کے زیادہ اخراجات کا باعث بن سکتا ہے۔

6. محدود قابل تجدید توانائی انضمام:
اعلیٰ ابتدائی سرمائے کی لاگت:
جب کہ پاکستان نے قابل تجدید توانائی کی ترقی میں پیش رفت کی ہے، لیکن قابل تجدید توانائی کے بنیادی ڈھانچے کی تنصیب سے وابستہ ابتدائی سرمائے کے اخراجات زیادہ ہو سکتے ہیں۔ یہ ابتدائی سرمایہ کاری بجلی کی مجموعی لاگت میں حصہ ڈالتی ہے۔ تاہم، طویل مدت کے دوران، قابل تجدید توانائی کے ذرائع مہنگے درآمدی ایندھن پر انحصار کم کرکے زیادہ سرمایہ کاری مؤثر اور پائیدار حل فراہم کر سکتے ہیں۔

7. بجلی کی طلب میں موسمی تغیرات:
گرمیوں کے دوران سب سے زیادہ طلب:
پاکستان کو چوٹی کے موسموں کے دوران بجلی کی طلب میں نمایاں اضافے کا سامنا کرنا پڑتا ہے، خاص طور پر گرمیوں میں جب ایئر کنڈیشنگ کا استعمال بڑھ جاتا ہے۔ اس اعلیٰ طلب کو پورا کرنے کے لیے بجلی کی اضافی پیداواری صلاحیت کی ضرورت ہوتی ہے، جو اکثر مہنگے کرائے کے پاور پلانٹس کی تعیناتی یا زیادہ مہنگے ایندھن کی درآمد کے ذریعے پوری ہوتی ہے، جس کی وجہ سے ان چوٹی کے ادوار میں بجلی کی قیمتیں زیادہ ہوتی ہیں۔

پاکستان میں بجلی کی بلند قیمت سے نمٹنے کے لیے کثیر جہتی نقطہ نظر کی ضرورت ہے جو توانائی کے بنیادی ڈھانچے کو بہتر بنانے، نقصانات اور چوری کو کم کرنے، گردشی قرضوں کے مسئلے کو حل کرنے، ٹیرف کے موثر ڈھانچے کو نافذ کرنے، اور قابل تجدید توانائی کے ذرائع کو فروغ دینے پر مرکوز ہے۔ ان چیلنجوں سے نمٹنے کے ذریعے، پاکستان اپنے شہریوں کے لیے زیادہ موثر اور سستی بجلی کے نظام کے لیے کام کر سکتا ہے۔

Spread the love

اپنا تبصرہ بھیجیں