دماغ کو بڑھانے والےمشہور مشروبات جان کر ہو جا ئیں گے آپ حیران۔

حیرت انگیز مشروبات جو دماغی طاقت کو بڑھانے میں مدد کرتے ہیں دماغی طاقت آپ کی روزمرہ کی زندگی کے لیے ضروری ہے اور آپ کو توجہ مرکوز رکھنے اور چوکنا رہنے میں مدد دیتی ہے خوش قسمتی سے وہاں بہت سارے صحت بخش مشروبات موجود ہیں جو آپ کے دماغ کو وہ فروغ دے سکتے ہیں جس کی اسے بہترین کارکردگی دکھانے کی ضرورت ہے۔ لہذا اگر آپ کسی ایسی چیز کی تلاش کر رہے ہیں جو آپ کو زیادہ ذہنی وضاحت دے اور آپ کی توجہ کو بڑھا سکے تو اس میں ہم کچھ ایسے حیرت انگیز مشروبات کے بارے میں بات کرنے جا رہے ہیں جو دماغی طاقت کو بڑھانے میں مدد دیتے ہیں ۔

نمبر ایک ۔

بلو بیری کا جوس بلو بیری کا جوس نہ صرف مزیدار ہے بلکہ یہ بہت سے صحت کے فوائد سے بھی بھرپور ہے اس میں وٹامن بھی ہوتا ہے۔ سی اور میگنیشیم جو کہ صحت مند ہڈیوں اور دانتوں کے لیے ضروری ہے بلیو بیری کا جوس پینے سے دماغی طاقت کو بڑھانے میں مدد مل سکتی ہے کیونکہ بلیو بیری میں اینتھوسیانز ہوتے ہیں جو علمی افعال کو بہتر بناتے ہیں بلو بیری میں موجود دیگر مرکبات یادداشت کی کمی الزائمر ڈیمنشیا اور دیگر اعصابی مسائل سے تحفظ فراہم کرتے ہیں۔

بلیو بیری کے جوس میں بہت سے دوسرے اینٹی آکسیڈنٹس بھی ہوتے ہیں جو جسم میں فری ریڈیکلز اور سوزش سے حفاظت کرتے ہیں یہ اینٹی آکسیڈنٹس بلڈ پریشر کے ساتھ ساتھ کولیسٹرول کی سطح کو کم کرنے کے لیے بھی جانا جاتا ہے جو بلو بیری کا جوس ان لوگوں کے لیے بہترین انتخاب ہے جو مجموعی صحت کو بہتر بنانے کے قدرتی طریقے تلاش کرتے ہیں۔

نمبر دو ۔

اورنج جوس اورنج جوس وٹامن سی اور دیگر غذائی اجزا کا ایک اچھا ذریعہ ہے جو آپ کے دماغ کو مدد فراہم کرتا ہے وٹامن سی سے بھرپور ہونے کے علاوہ نارنجی فولیٹ پوٹاشیم اور فائبر کا بھی ایک اچھا ذریعہ ہیں یہ غذائی اجزاء دماغ میں خون کے بہاؤ کو صحت مند بنانے میں مدد دیتے ہیں۔ اور آپ کے الزائمر کی بیماری کے خطرے کو کم کر سکتے ہیں جب آپ سنتری کا جوس پیتے ہیں تو وٹامن سی آپ کے جسم میں تیزی سے سفر کرتا ہے یہ آپ کے مدافعتی نظام کو صحت مند رکھنے میں مدد کرتا ہے اور بلڈ پریشر کو منظم کرنے والے ہارمونز کی پیداوار میں ایڈز میں مدد کرتا ہے وٹامن سی دماغ میں نیورو ٹرانسمیٹر کی مدد کے لیے ضروری ہے۔

موڈ یاداشت اور نیند کے چکر کو منظم کرنے میں مدد کرتا ہے فولیٹ نارنجی میں پایا جانے والا ایک اور غذائیت ہے جو دماغ کے صحت مند افعال کے لیے اہم ہے کیونکہ یہ ہومو سسٹین کو امینو ایسڈ میں تبدیل کرنے میں مدد کرتا ہے جو جسم کے میٹابولک افعال کے لیے مفید ہے ہومو سسٹین کی سطح ان لوگوں میں بلند ہوتی ہے جن کے قلبی امراض ہوتے ہیں۔

نمبر تین ۔

ہلدی اور ادرک کی چائے ہلدی ایک قدیم مسالا ہے جسے ہزاروں سالوں سے دوا کے طور پر استعمال کیا جا رہا ہے جدید سائنس نے حال ہی میں اس کے حیرت انگیز صحت کے فوائد دریافت کرنا شروع کیے ہیں خاص طور پر جب دماغ کی بات کی جائے تو ہلدی میں کرکومین نامی مرکب ہوتا ہے۔ اس مرکب کے جانوروں کے مطالعے میں نیورو پروٹیکٹو اثرات دکھائے گئے ہیں ایک تحقیق میں جنس ہلدی دماغ میں آکسیڈیٹیو نقصان اور سوزش کو کم کرکے الزائمر کی بیماری سے تحفظ فراہم کرتا ہے ادرک کی جڑ کے ساتھ ہلدی کا مرکب چائے کو مزید طاقتور بناتا ہے ادرک کی جڑوں میں استعمال کیا گیا ہے۔

روایتی چینی ادویات کو ہاضمے میں معاون کے طور پر اور متلی کے علاج کے لیے یہ بھی جانا جاتا ہے کہ یہ خون میں شکر کی سطح کو متوازن رکھنے اور پورے جسم میں گردش کو بڑھانے میں مدد فراہم کرتی ہے ادرک کی جڑ زیادہ تر گروسری اسٹورز یا ایشیائی بازاروں میں تازہ یا خشک خریدی جا سکتی ہے ہلدی اور ادرک کا امتزاج بہترین چائے جس کا سارا دن لطف اٹھایا جا سکتا ہے یہ مسالہ دار مشروب بنانا آسان ہے اور یہ آپ کو توانائی بخشے گا جو توجہ اور ذہنی وضاحت کو برقرار رکھنے میں مدد کرتا ہے ۔

نمبر چار ۔

لونگ کی چائے دماغی طاقت بڑھانے کا ایک بہترین طریقہ ہے اس چائے کے صحت کے لیے بہت سے فوائد ہیں اور اسے گرم اور سرد دونوں صورتوں میں استعمال کیا جا سکتا ہے۔ اسے صدیوں سے مسالے کے طور پر استعمال کیا جا رہا ہے اور توجہ کو بہتر بنانے اور بیماریوں سے بچاؤ کے علاج کے طور پر لونگ کا استعمال قدیم مصر سے شروع ہوتا ہے جہاں اس کا استعمال امبلنگ ایجنٹ کے طور پر کیا جاتا تھا تب سے یہ دریافت ہوا ہے کہ لونگ میں ضروری تیل موجود ہوتے ہیں دل اور خون کی گردش کے نظام کے لیے لونگ کو دانتوں کے درد اور دانتوں کے دیگر مسائل کے علاج میں بھی کارآمد جانا جاتا ہے،

لونگ میں موجود ضروری تیل جراثیم کش خصوصیات رکھتے ہیں جو انفیکشن سے لڑنے اور درد کو دور کرنے میں مدد دیتے ہیں لونگ سانس کے مسائل کے علاج میں بھی بہت اچھے ہیں جیسے برونکائٹس یا دمہ لونگ کی چائے میں یوجینول ہوتا ہے جو چائے کو اس کا الگ ذائقہ دینے کا ذمہ دار ہوتا ہے اور یوجینول کی خوشبو لونگ کو دوسرے مصالحوں کے مقابلے میں زیادہ موثر بناتی ہے جب بات انفیکشن سے لڑنے کی ہو تو اس کی وجہ یہ ہے کہ اس میں مضبوط اینٹی بیکٹیریل خصوصیات ہیں جو کہ بغیر جراثیم کو جلدی مارنے میں مدد کرتی ہیں۔

نمبر پانچ ۔

بلیک کافی دنیا کا مقبول ترین مشروب ہے جس سے دن میں کسی بھی وقت لطف اٹھایا جاسکتا ہے لیکن کچھ لوگ اسے صبح اٹھ کر پینا پسند کرتے ہیں تاکہ انہیں شروع کرنے میں مدد ملے کافی کے بہت سے فوائد ہیں جن میں یادداشت کو بہتر بنانا اور ارتکاز اور بہتر ایتھلیٹک کارکردگی اس میں پولیفینول نامی اینٹی آکسیڈنٹس بھی ہوتے ہیں جن کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ کافی میں موجود کیفین کینسر کو روکنے میں مدد دیتی ہے جو کہ ایڈرینالین اور ڈوپامائن دونوں کی پیداوار کو متحرک کرتی ہے جو کہ موڈ کو بہتر بنانے میں مدد کرتی ہے اور کیفین دماغ میں خون کے بہاؤ کو بھی بڑھاتی ہے جس سے دماغی کارکردگی بہتر ہوتی ہے۔ 2018 میں شائع ہونے والی ایک تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ روزانہ تین کپ بلیک کافی پینے سے دماغی افعال اور عمر رسیدہ افراد میں صلاحیت کو بہتر بنانے میں مدد ملتی ہے ۔

نمبرچھ۔

اسموتھیز آپ کے روزمرہ کے غذائی اجزاء حاصل کرنے کا ایک تیز اور آسان طریقہ ہے جو کہ آپ کو اپنی غذا کو پورا کرنے میں بھی مدد دیتی ہے۔ روزانہ کیلوری کی مقدار کے اہداف جو وزن کم کرنے میں مدد کر سکتے ہیں وہ آسان ہیں اور چلتے پھرتے آپ کے ساتھ لے جایا جا سکتا ہے اگر آپ کے پاس بلینڈر ہے تو یہ آپ کی خوراک میں زیادہ پھل اور سبزیاں حاصل کرنے کا ایک آسان طریقہ ہے بغیر زیادہ تیاری کیے کام کی ہمواریاں وٹامن اے اور سی فولیٹ اور اومیگا 3 فیٹی ایسڈ جیسے ضروری غذائی اجزاء فراہم کرکے دماغی طاقت کو بڑھانے میں مدد کرتی ہیں ۔

جو کہ دماغ کی بہترین صحت کے لیے ضروری ہیں یہ غذائی اجزاء جسم میں سوزش کو کم کرنے میں مدد کرتے ہیں جو کینسر اور دل کی بیماری جیسی بیماریوں کو روکنے میں مدد کرسکتے ہیں۔ بعد میں زندگی میں دماغی افعال کو متاثر کرتا ہے اسموتھیز میں موجود فائبر مواد آپ کو زیادہ دیر تک پیٹ بھرنے کا احساس دلانے میں بھی مدد کرتا ہے لہذا آپ کو ایسا محسوس نہیں ہوتا کہ آپ کو اکثر ناشتہ کرنے کی ضرورت ہوتی ہے یہ خاص طور پر فائدہ مند ہو سکتا ہے اگر آپ رات گئے یا ناشتہ میں کرتے ہیں جب آپ کے وزن میں کمی کا باعث بن سکتے ہیں ۔

نمبرسات۔

سبز چائے کو صدیوں سے اپنی دواؤں کی خصوصیات کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے اس میں کئی بائیو ایکٹیو مرکبات پائے جاتے ہیں جنہیں فلیوونائڈز کہتے ہیں جو اسے اپنی خصوصیت کا رنگ اور ذائقہ دیتے ہیں۔ امینو ایسڈ ایل تھینائن جو نوجوانوں میں یادداشت اور توجہ کے دورانیے کو بہتر بناتا ہے اس کے علاوہ سبز چائے میں کیفین اور کیچنز ہوتے ہیں جو دل کی بیماری فالج اور کچھ کینسر سے بچا سکتے ہیں 2012۔

کی ایک تحقیق میں بتایا گیا کہ سبز چائے دماغ کو آکسیڈیٹیو سے بچانے میں مددگار ثابت ہوتی ہے۔ فری ریڈیکلز کی وجہ سے ہونے والا تناؤ فری ریڈیکلز غیر مستحکم مالیکیول ہوتے ہیں جو پورے جسم کے خلیوں کو نقصان پہنچاتے ہیں جن میں دماغ میں موجود سبز چائے میں اینٹی آکسیڈنٹ خصوصیات ہوتی ہیں جو اس نقصان کو ہونے سے روکنے میں مدد کرتی ہیں ۔

نمبر آٹھ ۔

چقندر کا رس دماغ کو فروغ دینے کا بہترین طریقہ ہے۔ طاقت کے ساتھ ساتھ آپ کی مجموعی صحت دماغ ایک بہت ضروری عضو ہے اور اسے صحیح طریقے سے کام کرنے کے لیے ایندھن کی ضرورت ہوتی ہے چقندر کا جوس نائٹریٹ سے بھرا ہوتا ہے جو بلڈ پریشر کو کم کرنے اور دوران خون کو بہتر بنانے میں مدد کرتا ہے جس کے نتیجے میں دماغی طاقت میں اضافہ ہوتا ہے چقندر کے جوس میں فولیٹ بھی ہوتا ہے جو کہ صحت کے لیے ضروری ہے۔ خون کے سرخ خلیات کی پیداوار اور ڈی این اے اور آر این اے کی ترکیب اس سے صحت مند نیورونز کو برقرار رکھنے میں مدد ملتی ہے جو دماغ کے معمول کے کام کے لیے اہم ہیں اس کے علاوہ چقندر کے جوس میں بیٹین ہوتا ہے جو جسم میں ہومو سسٹین کی سطح کو منظم کرنے میں مدد کرتا ہے ہومو سسٹین ایک امینو ایسڈ ہے جو اعصابی بافتوں کو نقصان پہنچا سکتا ہے۔

جب چقندر میں زیادہ مقدار میں موجود ہوتے ہیں تو اس میں نائٹریٹ بھی ہوتا ہے جو جسم میں نائٹرک آکسائیڈ میں تبدیل ہو جاتا ہے نائٹرک آکسائیڈ خون کے بہاؤ کو بڑھاتا ہے جس سے آپ کے خلیات تک آکسیجن اور غذائی اجزاء کی ترسیل بہتر ہوتی ہے اس کا مطلب ہے کہ آپ کے دماغ کو بھی نائٹرک آکسائیڈ کی اعلیٰ صلاحیت پر کارکردگی کا بہتر موقع ملے گا۔ فیل گڈ ہارمون سیروٹونن کی پیداوار کو بڑھا کر تناؤ کی سطح کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے یہ ہارمون آپ کے موڈ کو منظم کرنے میں مدد کرتا ہے اور آپ کو دن بھر خوش اور مثبت محسوس کرتا ہے ۔

نمبر نو ۔

ہربل چائے ایک قسم کی دواؤں کی چائے ہے جو خشک سے بنی ہے۔ یا تازہ پتوں کی پنکھڑیوں کے بیج یا پودوں کی جڑیں جڑی بوٹیوں کو مشروب کے ذائقے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے یا یہ ایک ایسے جزو کے طور پر کام کر سکتا ہے جو صحت بخش فوائد میں اضافہ کرتا ہے ہربل چائے کا مقصد آرام دہ ہونا ہوتا ہے جس میں اکثر کیمومائل یا لیمن بام جیسے اجزاء ہوتے ہیں ہربل چائے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔

اس کی دواؤں کی خصوصیات صدیوں سے بہت سی ثقافتوں کی اپنی روایتی جڑی بوٹیوں والی چائے ہیں جو عام بیماریوں جیسے نزلہ یا سر درد کے علاج کے طور پر استعمال ہوتی ہیں اس کے علاوہ اس کی آرام دہ خصوصیات کے علاوہ جڑی بوٹیوں والی چائے دماغی افعال کو بھی بہتر بنا سکتی ہے اور ذہنی تناؤ کو زیادہ مؤثر طریقے سے کنٹرول کرنے میں مدد دیتی ہے۔ یہ دکھایا گیا ہے کہ بعض جڑی بوٹیوں میں خوشبودار تیل توجہ کے دورانیے کو بڑھانے اور یادداشت کو بہتر بنانے میں مدد کر سکتے ہیں۔

نمبر دس۔

کمبوچا ایک خمیر شدہ چائے ہے جو صدیوں سے چلی آرہی ہے اور صحت کی دنیا میں اس کی مقبولیت آسمان کو چھو رہی ہے کیونکہ زیادہ سے زیادہ لوگوں نے اس کے بہت سے فوائد دریافت کیے ہیں۔ دماغی طاقت کو بڑھانے میں مدد مل سکتی ہے کیونکہ اس میں وٹامنز ہوتے ہیں جو دماغی خلیات کی نشوونما اور افعال کو سپورٹ کرتے ہیں جن میں فولک ایسڈ وٹامن شامل ہیں یہ غذائی اجزاء دماغ کے صحیح کام کے لیے ضروری ہیں یہ خلیوں کو کھانے سے توانائی پیدا کرنے میں مدد دیتے ہیں ۔

تاکہ آپ کا جسم واضح طور پر سوچ سکے اور پوری توجہ مرکوز رہ سکے۔ آپ کے ڈے کمبوچا میں پروبائیوٹکس بھی ہوتے ہیں جو کہ فائدہ مند بیکٹیریا ہیں جو ہاضمے کو منظم کرنے اور قوت مدافعت کو بڑھانے میں مدد دیتے ہیں وہ غذائی اجزاء کے جذب کو بھی بہتر بناتے ہیں کولیسٹرول کی سطح کو کم کرتے ہیں اور سوزش کو کم کرتے ہیں ان میں سے زیادہ تر مشروبات آپ کے دماغ کو فروغ دینے کا دعویٰ کرتے ہیں نہ کہ آپ کو ہوشیار بناتے ہیں اور نہ ہی آپ کی یادداشت کی صلاحیت میں اضافہ کرتے ہیں۔ شکر یہ۔۔

Spread the love
کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں