فرشتوں کو قرآن پڑھنے کی اجازت نہیں ہےجانیے کیوں؟

اب آپ کو اندازہ ہے کہ جب جبریل علیہ السلام نبی صلی اللہ علیہ وسلم وحی لے کر آتے ہیں تو کیا ہوتا ہے اب ہم جانتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے یہ بہت بھاری تھا، میرا مطلب ہے کہ وہ سخت سردی کے دن بھی پسینہ آ جائیں گے، یہ ان کے لیے سخت تھا۔ آپ کو معلوم ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ایک اونٹ پر بیٹھے ہوئے تھے ایک سورہ آپ پر نازل ہوئی اور اونٹ کے گھٹنے بندھے ہوئے تھے۔

اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی آری اس اونٹ کے لیے رحمت کے طور پر اتری تو یہ ظاہری طور پر نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے سخت تھا جب اس پر وحی آتی تھی لیکن یہ عمل کیسے ٹھیک ہوتا ہے اور یہ واقعی دلکش ہے کہ ہم جانتے ہیں کہ اللہ کہتا ہے کہ اگر ہم ایسے ہوتے۔ اس قرآن کو کسی پہاڑ پر نازل کرنے کے لیے تم نے وہ پہاڑ ریزہ ریزہ ہوتے دیکھا ہو گا اور اللہ کے خوف سے اسے لرزتے اور ریزہ ریزہ ہوتے ہوئے دیکھا ہو گا، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے دل میں آنا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے وہ وحی اٹھانی ہے لیکن یہ سب کیسے ہوتا ہے؟

تو اللہ تعالیٰ سے پوچھا گیا کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے وحی کیسے آتی ہے آپ نے فرمایا کہ جب اللہ تعالیٰ وحی کے الفاظ کہنا چاہتا ہے جب اللہ تعالیٰ وحی کے الفاظ کہنا چاہتا ہے تو فرماتا ہے کہ آسمان سے ایک زور کا شور ہے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ یہ زنجیریں کھینچنے کی طرح ہے۔ کوہ صفا کے اوپر جیسا کہ میرا مطلب ہے کہ پہاڑ پر زنجیریں کھینچنے کی شدت کا تصور کریں اور فرمایا کہ آسمان کے فرشتے اس سے مغلوب ہوتے ہیں اور اللہ بولتا ہے اب کیا آپ تصور کر سکتے ہیں کہ اللہ جبرائیل سے براہ راست کلام کرتا ہے جبرائیل کو وحی آتی ہے؟

اللہ کی طرف سے قرآن وہ اللہ کی طرف سے وحی سنتا ہے اور جب اللہ تعالیٰ وحی سے فارغ ہوا تو فرشتے واپس آ گئے اور جبریل نازل ہونے لگے تو نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ فرشتے جبرائیل کو گھیر لیتے ہیں اور کہتے ہیں کہ تمہارے رب نے کیا کہا اور جبرائیل کہتے ہیں کہ میں نے اس میں کلام کیا۔ سچ ہے اور وہ سب سے بلند اور عظیم ہے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ وہ تمام فرشتے سچ کہنا شروع کر دیتے ہیں سچ سچ کہ وہ سب سے بلند اور عظیم ہے اور وہ سلام کے ساتھ نیچے اترنا شروع کر دیتے ہیں جب وہ وحی نازل کرتا ہے۔

سورۃ النبی صلی اللہ علیہ وسلم بلاشبہ 20 صفحات پر مشتمل ایک شاٹ میں ایک شاٹ میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی آری پر ستر ہزار فرشتے اللہ کی تسبیح کرتے اور اس کی حمد و ثنا بیان کر رہے تھے کیونکہ یہ رسول پر آیا تھا کہ اس وحی کا عمل صرف اتنا ہی نہیں ہے پیارے بھائیو اور بہنو لیکن آپ جانتے ہیں کہ جب آپ قرآن کی تلاوت کرتے ہیں تو فرشتوں کو اپنے گھیرے میں لینے کا سب سے آسان طریقہ یہ ہے کہ آپ قرآن پڑھنا شروع کر دیں آپ جانتے ہیں کیوں کہ فرشتوں کو قرآن کی تلاوت کا تحفہ نہیں دیا گیا ۔

اور آپ میں سے کچھ ایسے ہیں جیسے انتظار کرو جو فرشتے قرآن کی تلاوت نہیں کرتے ہاں وہ سنتے ہیں صرف چند فرشتے ہیں جنہیں اللہ تعالیٰ نے حقیقت میں اس کی تلاوت کا تحفہ دیا ہے اور کچھ فرشتے لیکن اکثر فرشتے اسے سنتے ہیں تو جب آپ قرآن مجید میں تلاوت شروع کرتے ہیں فرشتوں نے گواہی دی کہ فرشتے قرآن کی تلاوت کرتے وقت لوگوں کو گھیر لیتے ہیں کیونکہ وہ اسے سننا پسند کرتے ہیں کیونکہ وہ سبحان اللہ نہیں پڑھتے اس لیے نبی صلی اللہ علیہ وسلم پر اسی طرح وحی آتی ہے ظاہر ہے کہ اس کی تعداد بہت زیادہ ہے۔

اس کے طریقے کہ جبرائیل علیہ السلام نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو کیسے سکھاتے تھے اور یہاں تک کہ سبحان اللہ نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو تلاوت کے ایک سے زیادہ طریقے دیکھے تلاوت کے سات طریقے کیوں کہ آپ جانتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم تلاوت کے ان سات طریقوں کو پڑھنے سے لوگ بہت جلد اسلام میں داخل ہو جاتے تھے کیونکہ تلاوت میں مختلف لہجے شامل تھے سب کے سب آسمانی تھے ایسا کیسے ہوا کہ حضرت جبرائیل علیہ السلام میرے پاس آئے اور مجھے کہا کہ آپ کو جو تلاوت سنائی گئی ہے اس میں قرآن پڑھو تو انہوں نے کہا کہ میں نے پڑھنا شروع کر دیا۔

جبرائیل میرے دائیں طرف مکہ پر تھا اور میرے بائیں بائیں طرف تھا مکار نے کہا کہ اسے بڑھا دو تو جبریہ نے مجھے ایک اور قراءت سکھائی اور کہا کہ بڑھا دو تو اس نے مجھے ایک اور قراءت سکھائی اس میں اضافہ کرو یہاں تک کہ وہ سات مرتبہ بیٹھ گئے اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے دیکھا۔ قرآن مجید کی تلاوت کے سات مختلف طریقے بتائے کہ یہ اس طرح نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آتا ہے جس طرح آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو سکھایا گیا تھا اور یہ واقعی معجزہ اور شاندار ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے برداشت کیا اور اللہ کے فضل سے اسے یاد کیا اب کیا ہے؟

کیا کچھ اور طریقے ہیں جن کی نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس پہنچی آپ نے خوابوں میں ان کے پاس آنا بند نہیں کیا صرف اس وجہ سے کہ وہ اب وحی کے ساتھ اپنے آپ کو ظاہر کر رہا تھا اس کا یہ مطلب نہیں کہ اس نے اپنے خوابوں میں آنا چھوڑ دیا اس کے خوابوں میں کچھ اور طریقے ہیں وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس کبھی میکا کے ساتھ آتا ہے تو کبھی نبی صلی اللہ علیہ وسلم آرے کو اکٹھا کر کے دیکھتے ہیں جبرید اور میخائل اسے لے جاتے ہیں اور وہ اسے قبر کے عذاب اور انعامات دکھاتے ہیں چنانچہ طویل حدیث میں عذاب قبر اور انعامات جبریل اور میخائل نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف اشارہ کیا کہ کیا ہو رہا ہے بہت اچھا ہے پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے آپ کو جنت اور جہنم کی آگ دکھائی اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو جنت میں اپنا گھر دکھایا گیا۔

تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنا گھر جنت میں دیکھا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اس مقام پر میں نے جبریل اور میخائل سے کہا کہ اب مجھے چھوڑ دو میں اپنے گھر کا جواب دوں میں واپس نہیں جانا چاہتا اب مجھے اندر آنے دو اس نے اپنا ہاتھ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے بازو پر رکھا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تمھارے اس دنیا میں ابھی کچھ وقت ہے۔ اور پھر آپ داخل ہوں گے انشاء اللہ ٹھیک ہے دوسری بار نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ میں نے خواب میں جبریل کو دیکھا اور میخائل اور میخائل نے جبرائیل سے کہا کہ اسے ایک تشبیہ دو اسے دوسری دو اس نے کہا کہ پیغام کی تشبیہ یا پیغام کی تمثیل جو دی گئی ہے۔

آپ کے نزدیک یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اس بادشاہ میں سے نہیں ہیں جس نے ایک عدسہ فتح کیا جب بادشاہ فتح کر کے اس سرزمین کو فتح کرتا تو اس نے اس سرزمین میں ایک گھر بنایا اور پھر جب وہ گھر بنایا تو اس نے وہ گھر بنایا تو اس پر کھانے کا دسترخوان بچھا دیا۔ جس نے اس گھر میں آنا چاہا اسے دعوت دی کہ زمین اسلام ہے گھر جنت ہے کھانا ہے رسول اللہ اور آپ اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم اللہ کے رسول ہیں جس نے آپ کی دعا قبول کی وہ جنت میں داخل ہوا اور اس میں سے جو چاہیں کھائیں گے پس جبرائیل علیہ السلام اور میخائل نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو سمجھا رہے ہیں کہ وہ کون ہے اور درحقیقت اسے بتا رہا ہے کہ وہ کس چیز کی نمائندگی کرتا ہے اور اس کا پیغام کس چیز کی نمائندگی کرتا ہے دوسرے اوقات جابر اسلام نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس خواب میں اللہ کے حکم کے ساتھ آیا تو نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اللہ کی ایک تصویر دیکھی۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے مسلسل تین راتوں تک دیکھا اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے فرمایا کہ یہ دنیا اور آخرت میں آپ کی بیوی ہے اور وہ فخر کرتی تھیں کہ جبرئیل نے میری طرف سے تجویز کیا ہے جیسے یہ امتیاز کس کے پاس ہے جبرائیل آئے اور میرا ہاتھ مانگا۔ حق سبحان اللہ ان کی طرف سے تجویز کیا کبھی کبھی جبرائیل علیہ السلام نے انہیں جنت کے بے ترتیب مناظر دکھائے تو ایک دفعہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم میرے پاس آئے اور مجھے جنت کے ایک محل میں لے گئے وہ اتنا خوبصورت تھا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے آرے اندر جانے ہی والے تھے۔

جبری میں جانے کے بارے میں کہا کہ اصل میں وہ گھر ہے تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ میں اندر نہیں گیا کیونکہ مجھے یاد آیا کہ عمر ایک شخص سے کتنا حسد کرتا ہے اس لیے میں ابھی ٹھہر گیا اور اس نے اگلے دن خواب بیان کیا اور عمر وہاں موجود تھے اور عمر کو برا لگا۔ کہ رسول اللہ ﷺ جنت میں اپنے گھر میں داخل ہونے سے بہت شرماتے تھے جیسے عمرؓ کو جنت میں محل ہونے کا شوق تھا جیسے آپ کو لگتا ہے کہ میں آپ کو جنت میں اپنے گھر میں آنے سے روک دوں گا رسول اللہﷺ بھی فرماتے ہیں میرے پاس آئے اور مجھے اپنے پاس لے گئے۔

اس نے مجھے میری امت کا وہ دروازہ دکھایا جس سے میری امت داخل ہو گی یا جنت کا دروازہ جس سے میری امت داخل ہو گی تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے دیکھا کہ وہ خواب بیان کر رہے ہیں کہ ابوبکر رضی اللہ عنہ رونے لگے اب آپ کیوں رو رہے ہیں اس نے کہا اللہ کاش! آپ کے ساتھ تھے کہ آپ نے حضرت ابوبکرؓ کا ہاتھ پکڑا اور فرمایا کہ آپ اور میں اس طرح جنت میں داخل ہوں گے آپ اچھے ہیں یہ آپ کو دکھاتا ہے کہ صحابہ کرام بھی کہاں تھے وہ بھی ایسے نہیں تھے کہ یہاں کیا ہوا۔

اپنے بارے میں فکر مند تھے اپنی نجات کی فکر میں تھے اللہ اور رسول کو راضی کرنے کی فکر تھی تو خواب آتے رہے ٹھیک ہے اب حقیقی زندگی میں جاپان میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس وحی کے علاوہ اور کس طریقے سے آیا آپ کو سمجھنا ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے سکھایا سنت ٹھیک ہے نبی صلی اللہ علیہ وسلم خالی خواہش سے نہیں بولتے ہیں اس لیے حسن جو کہتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم آری کے پاس آتے تھے اور انہیں اسی طرح سنت سکھاتے تھے جس طرح قرآن پڑھاتے تھے اس لیے جو بھی حدیث تم سنتے ہو وہ جبریل کی ہے۔

اسلام نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی تعلیم بھی دیتا ہے تو یہ اب بھی انہیں سنت کی تعلیم دیتا ہے نہ صرف یہ کہ وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ کھڑا ہے اور وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے بیانات کو بھی اہل بناتا ہے کہ جنگ بدر سے پہلے نبی صلی اللہ علیہ وسلم ہم سے بات کر رہے تھے وہ ہمیں دے رہے تھے۔ خطبہ دیا اور ہم نے کہا کہ ہم بستر پر چلے جاتے ہیں اور ہم سب کچھ کھو دیتے ہیں اور آپ جانتے ہیں کہ ہم اسی حالت میں مر جائیں گے کیا ہمارے تمام گناہ معاف کر دیے جائیں گے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے جیسے ہی یہ کہا ہاں دیکھا آپ نے فرمایا یہ ہے وہ کہتے ہیں جب تک کہ آپ کے پاس کوئی نہ ہو۔

قرض لینے کے لیے آپ کو اپنا قرض ادا کرنا پڑے گا پہلے ایک دفعہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم صحابہ کرام کے ساتھ مسجد میں تھے کہ اچانک آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے جوتے اتار کر نماز ادا کی اب احساس ہوا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا پیغام مٹی تھا کسی پیغام میں نہ چلنا اپنے جوتوں کے ساتھ نہیں اور ایسے بنو جیسے ارے یہ سنت ہے یہ گندگی تھی تو ہاں انہوں نے نماز پڑھتے وقت جوتے پہن لئے اور اس کے جوتے اتارے اور نماز پڑھنے لگے جب وہ نماز سے فارغ ہوئے تو انہیں معلوم ہوا کہ تمام صحابہ نے اپنے جوتے اتار دیئے تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا۔

تم سب نے اپنے جوتے کیوں اتارے انہوں نے کہا کہ ہم نے آپ کو اپنے جوتے اتارتے ہوئے دیکھا تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ میں نے ایسا کیا صرف اس کی وجہ یہ ہے کہ جبرائیل علیہ السلام نماز سے پہلے میرے پاس آئے اور مجھے بتایا کہ میں نے کسی چیز پر قدم رکھا اس لیے جبریل اکثر نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ہوتے ہیں ۔

Spread the love

اپنا تبصرہ بھیجیں