موبائل کے تعلیم پر مثبت اور منفی اثرات

موبائل فون نے تعلیم پر بے شمار مثبت اثرات مرتب کیے ہیں۔ کچھ اہم مثبت اثرات ا س میں شامل ہیں:
 
1. تعاون اور مواصلات:
موبائل فون طلباء اور اساتذہ کے درمیان تعاون اور مواصلات کی سہولت فراہم کرتے ہیں۔ طلباء اپنے ساتھیوں کے ساتھ آسانی سے رابطہ قائم کر سکتے ہیں، خیالات کا اشتراک کر سکتے ہیں، پروجیکٹس پر تعاون کر سکتے ہیں، اور میسجنگ ایپس، آن لائن ڈسکشن فورمز، اور ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے اساتذہ سے مدد حاصل کر سکتے ہیں۔ یہ کمیونٹی کے احساس کو فروغ دیتا ہے اور سیکھنے کے نتائج کو بہتر بنا سکتا ہے۔
 
2. سیکھنے کی لچک:
موبائل فون سیکھنے میں لچک پیش کرتے ہیں۔ طلباء کسی بھی وقت اور کہیں بھی سیکھ سکتے ہیں، جب تک کہ ان کے پاس ان کے موبائل آلات ہوں۔ یہ لچک طلباء کو اپنے سیکھنے کے تجربے کو ذاتی بنانے اور اپنی رفتار سے مطالعہ کرنے کی اجازت دیتی ہے، جو ان کی مصروفیت اور معلومات کو برقرار رکھنے کو بہتر بنا سکتی ہے۔

 .3معلومات تک رسائی:
موبائل فون تعلیمی مواد اور وسائل تک آسان رسائی فراہم کرتے ہیں۔ طلباء تیزی سے معلومات تلاش کر سکتے ہیں، ای کتابوں، آن لائن مضامین، تعلیمی ایپس اور ویڈیوز تک رسائی حاصل کر سکتے ہیں، جس سے وہ مختلف مضامین کے بارے میں اپنے علم اور سمجھ میں اضافہ کر سکتے ہیں۔

.4 زبان سیکھنے اور مہارت کی ترقی:
موبائل ایپس اور زبان سیکھنے کے پلیٹ فارم نے طلباء کے لیے نئی زبانیں سیکھنا اور مخصوص مہارتیں تیار کرنا آسان بنا دیا ہے۔ طالب علم زبان سیکھنے کی ایپس، الفاظ بنانے والے، گرامر کی مشقیں، اور زبان کے تبادلے کے پلیٹ فارم تک رسائی حاصل کر سکتے ہیں، جس سے وہ اپنی لسانی صلاحیتوں کو آسانی سے بڑھا سکتے ہیں۔
 
5. تنظیم اور پیداواری صلاحیت:
موبائل فون مختلف ٹولز اور ایپس پیش کرتے ہیں جو طلباء کو منظم اور پیداواری رہنے میں مدد کرتے ہیں۔ طلباء پیداواری ایپس کا استعمال کر سکتے ہیں جیسے کہ نوٹ لینا، ٹائم مینجمنٹ، یاد دہانیاں، اور دستاویز سکین کرنا۔ یہ ٹولز طلباء کو توجہ مرکوز رکھنے، اپنے کام کے بوجھ کو مؤثر طریقے سے منظم کرنے، اور ان کی مجموعی پیداواری صلاحیت کو بہتر بنانے میں مدد کر سکتے ہیں۔
 
6. . انٹرایکٹو لرننگ:
موبائل فون تعلیمی ایپس اور ملٹی میڈیا مواد کے ذریعے انٹرایکٹو سیکھنے کے تجربات فراہم کرتے ہیں۔ طلباء انٹرایکٹو کوئزز، گیمز، سمیولیشنز، اور تعلیمی ویڈیوز کے ساتھ مشغول ہو سکتے ہیں، جس سے سیکھنے کے عمل کو مزید پرکشش اور پرلطف بنایا جا سکتا ہے۔ یہ انٹرایکٹو نقطہ نظر طلباء کی تفہیم اور تنقیدی سوچ کی مہارت کو بڑھا سکتا ہے۔
 
یہ نوٹ کرنا ضروری ہے کہ موبائل فون کے تعلیم پر متعدد مثبت اثرات ہوتے ہیں، لیکن ان کے استعمال کو متوازن اور مانیٹر کیا جانا چاہیے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ طالب علم غیر تعلیمی مواد سے زیادہ انحصار یا مشغول نہ ہوں۔ تعلیم پر موبائل فون کے مثبت اثرات کو زیادہ سے زیادہ کرنے کے لیے ماہرین تعلیم اور والدین کی طرف سے مناسب رہنمائی اور نگرانی بہت ضروری ہے۔

موبائل فون نے تعلیم پر بے شمارمنفی اثرات مرتب کیے ہیں۔ کچھ اہم منفی اثرات اس میں شامل ہیں:

1 .گردن اور کمر میں درد
یہ ایک ایسا مسئلہ ہے جس کے بارے میں بہت سے لوگ نہیں سوچتے کہ موبائل فون کے استعمال کی بات آتی ہے، لیکن جو لوگ اپنے آلے پر بہت زیادہ وقت گزارتے ہیں وہ گردن اور کمر میں درد، اور ٹینڈونائٹس یا بار بار تناؤ کی چوٹ کا زیادہ خطرہ رکھتے ہیں۔ یہ مسائل خاص طور پر طلباء اور نوجوانوں کے لیے پریشانی کا باعث ہیں کیونکہ ان کے جسم اب بھی نشوونما پا رہے ہیں، جو بعد میں زندگی میں پیچیدگیوں کا باعث بن سکتے ہیں۔ تاہم، یہ الٹا بھی کام کرتا ہے، اور اگر یہ مسائل جلد ہی پکڑے جاتے ہیں تو انہیں خود کو جلد درست کرنا چاہیے۔
  
2. حادثات
موبائل فون کے استعمال کا ایک اور نقصان دہ اثر ہر کسی کے لیے، نہ صرف طلباء، جسمانی حادثات کا بڑھتا ہوا خطرہ ہے۔ پیدل چلتے وقت اپنے فون کا استعمال کرنے کا مطلب یہ ہو سکتا ہے کہ آپ سڑک پار کرتے وقت نظر نہیں آتے، یا آپ ڈرائیونگ کے دوران اس کال کا جواب دینے کا فیصلہ کر سکتے ہیں۔ وجہ کچھ بھی ہو، موبائل فون استعمال کرنے سے آپ کے حادثے کا امکان زیادہ ہوجاتا ہے۔

3. تناؤ
چاہے بالواسطہ ہو یا بالواسطہ، موبائل فون کا استعمال طلباء کو زیادہ تناؤ کا شکار بنا سکتا ہے۔ اس کے نتیجے میں اسکول میں ان کی کارکردگی پر اثر پڑ سکتا ہے، اور دماغی صحت کے متعدد مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔ قلیل مدت میں سب سے بڑا مسئلہ تناؤ ہے، جو ایک ایسی چیز ہے جسے طلباء کے لیے جب ممکن ہو کم کیا جانا چاہیے۔
 
4. نیند کی کمی
موبائل فون تک لامحدود رسائی لت ہوسکتی ہے۔ چاہے یہ گیم کھیل رہا ہو یا سوشل میڈیا پر وقت گزار رہا ہو، وقت کا کھوج لگانا اور اسکرین کو گھورتے ہوئے گھنٹوں گزارنا آسان ہو سکتا ہے۔ اگر میری طرح، آپ کے بچے ہیں، تو شاید آپ سب ان کے سونے کے وقت، ہاتھ میں فون کے بعد بھی جاگتے ہوئے پکڑنے سے واقف ہوں گے۔ مزید یہ کہ نیلی روشنی دماغ کو متحرک کرتی ہے اور میلاٹونن کی پیداوار کو کم کرتی ہے، جو نیند کو متحرک کرتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ فیس بک جیسی ایپس نیلے اور سفید پر بھاری پڑتی ہیں: یہ آپ کے دماغ کو مصروف اور بیدار رکھتی ہے، یعنی آپ ایپ پر زیادہ وقت گزارتے ہیں۔
نیند کی کمی طلباء اور نوجوانوں کے لیے ایک خاص مسئلہ ہے۔ انہیں نہ صرف بالغوں کے مقابلے میں زیادہ نیند کی ضرورت ہوتی ہے بلکہ یہ ارتکاز کی کمی، چڑچڑاپن اور دماغی صحت کے مسائل کے زیادہ امکانات کا باعث بنتی ہے۔
  
5. بے چینی اور ڈپریشن
دماغی صحت کے مسائل کو موبائل فون کے استعمال سے جوڑنا کوئی نئی بات نہیں ہے، اور ہم میں سے بہت سے لوگوں نے یا تو خود یا کسی قریبی کے ساتھ اس کا تجربہ کیا ہے۔ سوشل میڈیا اور فوری مواصلت اس بات کی غیر صحت بخش توقع پیدا کرتے ہیں کہ کیا قابل قبول ہے یا حقیقی بھی، اور اس سے دماغی صحت کے بہت سے مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔
  
مطالعہ پر موبائل فون کے منفی اثرات سے بچنے کے لیے، مطالعہ کے دوران موبائل فون کے استعمال کے لیے مخصوص اصول طے کرکے حدود قائم کریں۔ خلفشار سے پاک مطالعہ کا ماحول بنائیں اور اپنے فون کو نظروں سے دور رکھیں۔ توجہ مرکوز رکھنے کے لیے پیداواری ایپس اور آف لائن وسائل کا استعمال کریں۔ مؤثر وقت کے انتظام کی تکنیکوں پر عمل کریں اور ساتھیوں اور خاندان سے تعاون حاصل کریں۔ ڈیجیٹل ڈیٹوکس کے ذریعے موبائل فون کے استعمال سے باقاعدہ وقفہ لیں اور آف لائن سرگرمیوں میں مشغول ہوں۔ خلفشار سے آگاہ رہنے کے لیے ذہن سازی کو فروغ دیں اور اپنی توجہ کو ری ڈائریکٹ کریں۔ ان حکمت عملیوں کو نافذ کرنے اور خود نظم و ضبط کو برقرار رکھنے سے، آپ مطالعہ پر موبائل فون کے منفی اثرات کو کم کر سکتے ہیں اور اپنی تعلیمی کارکردگی کو بہتر بنا سکتے ہیں۔

Spread the love

اپنا تبصرہ بھیجیں