گرمی میں گردے خراب ہونے کی بڑھی وجہ کیا ہے، ماہرین نے انتباہ کر دیا

ملک میں موجودہ گرمی کی بڑھتی ہوئی شدت کی وجہ سے شہریوں میں ڈائیریا کی وباء پھیلنے لگی ۔ جس کی وجہ سے ہسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کر دی گی اس وقت لاہور کے میو ہسپتال میں 45 افراد ، سروسز ہسپتال میں 40 افراد ، جنرل ہسپتال میں 25 جبکہ گنگا رام ہسپتال میں 6 افراد ڈائیریا داخل ہیں۔

ماہرین کی جانب سے لوگوں کو بلا ضرورت گھروں سے نکلنے سے منع کر دیا گیا ۔ اور اس گرمی میں پانی کا زیادہ استعمال کرنے کی ہدایت جاری کر دی۔ بڑھتی ہوئی گرمی اور تپش کی وجہ سے انسانی جسم کا پانی پسینہ بن کر جسم سے نکل جاتا ہے جس کے بعد انسانی جسم ڈی ہائیڈریشن کا شکار ہو جاتا ہے۔ اسٹنٹ پروفیسر یورولوجی کے مطابق گرمی کی شدت میں جوں جوں اضافہ ہو رہا ہے ایسے ہسپتالوں میں مریضوں کی تعداد بھی بڑھ رہی ہے گزشتہ 24 گھنٹوں میں صرف جناح ہسپتال میں اس مرض سے متعلق 70 مریض لائے گئے۔ مزید کہا کہ کسی موسم میں انفکیشن زیادہ جلدی پھیل جاتا ہے

جیسے کہ اب ڈائریا جو کہ دست کا مسئلہ ہے ۔ دست کی مسئلے کو حل کر نے کے لئے زیادہ تر لوگ گھروں میں ہی اس کا علاج کرتے ہیں جس کی وجہ سے حالت خراب ہو جاتی ہے کیونکہ دست رکتے ہیں اور پانی کے اخراج کے باعث انسانی گردے میں ایسی حالت میں کام کرنا چھوڑ دیتے ہیں اس لئے کسی بھی حالت میں ڈاکٹر سے رجوع کریں۔ گرمی سے بچنے کے لئے رومال سے سر ڈھانپ کر نکلیں۔ پورے بازو والی آستین پہنیں۔ بلا ضرورت گھروں سے نہ نکلیں۔ پانی بوائل کر کے استعمال کریں۔

Spread the love
کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں