ایسی علامات ظا ہر ہو توسمجھیں آپ کے گردے فیل ہو رہے ہیں ۔

آپ کے گردے فیل ہو رہے ہیں انتباہی علامات ،ان علامات کو نظر انداز نہ کریں سب سے زیادہ خوفناک بیماریوں میں سے ایک گردے کی بیماری ریاستہائے متحدہ میں تقریبا 37 ملین افراد کو متاثر کرتی ہے سب سے بری بات یہ ہے کہ علامات ظاہر نہیں ہوسکتی ہیں جب تک کہ گردوں کا 90 فیصد کام ختم نہ ہوجائے۔ علامات اکثر اس وقت تک کسی کا دھیان نہیں دیتیں جب تک کہ گردے فیل ہونے کے قریب نہ ہو جائیں اس کا مقصد اسے پہلے مرحلے پر کنٹرول کرنا ہوتا ہے اور اس کے لیے آپ سب کو گردے کی بیماری کی ابتدائی علامات اور علامات سے آگاہ ہونا چاہیے ۔تو آئیے ان عام علامات پر بات کرتے ہیں ۔

پہلے نمبر پر ۔

جن پر آپ کو نظر رکھنی چاہیے تھکاوٹ اور کمزوری تھکاوٹ اور کمزوری گردے فیل ہونے کی عام علامات ہیں کیونکہ گردے کام نہ کرنے پر جسم کی مجموعی صحت اور توازن کو برقرار رکھنے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ مناسب طریقے سے وہ جسم سے فضلہ اور اضافی سیالوں کو مؤثر طریقے سے نہیں نکال سکتے جس سے خون میں زہریلے مادے نکلتے ہیں جس سے آپ کو تھکاوٹ اور کمزوری محسوس ہوتی ہے اس کے علاوہ گردے کی خرابی بھی اریتھروپوئٹین نامی ہارمون کی سطح میں کمی کا باعث بنتی ہے جو خون کے سرخ خلیوں کی پیداوار کو منظم کرتا ہے۔

یہ خون کی کمی کا باعث بنتا ہے جو تھکاوٹ اور کمزوری کا باعث بن سکتا ہے تاہم یہ بات ذہن میں رکھیں کہ تھکاوٹ اور کمزوری گردے کی خرابی کی علامت ہوسکتی ہے لیکن یہ کئی دیگر عوامل کی وجہ سے بھی ہوسکتی ہے جیسے کہ نیند کی کمی یا کم خوراک ہونا۔ سستی ہے اس لیے اس سے پہلے کہ آپ اپنے گردے کے بارے میں فکر کرنے لگیں، رات کو اچھی نیند لینے اور متوازن کھانا کھانے کی کوشش کریں اور اگر آپ کو شک ہے کہ آپ کو گردے کا مسئلہ ہے تو بہتر ہے کہ ڈاکٹر سے رجوع کریں ۔

دو سرے نمبر پر ۔

گردےخون کو اتنی مؤثر طریقے سے فلٹر نہیں کر سکتے اور تمام اچھی چیزیں جیسے پروٹین اور دیگر اہم مالیکیول آپ کے پیشاب میں ختم ہو جاتے ہیں جہاں سے پیشاب میں موجود پروٹینز میں جھاگ آتا ہے اور یہ سب بلبلا اور جھاگ دار بنا سکتا ہے۔ اس حالت کو پروٹینوریا کہا جاتا ہے یہ نوٹ کرنا ضروری ہے کہ جھاگ دار پیشاب ہمیشہ گردے کی خرابی کی وجہ سے نہیں ہوتا ہے دیگر چیزیں جیسے پیشاب کے بہاؤ کی شرح زیادہ ہونے سے بھی پیشاب میں بلبلے بن سکتے ہیں اور اگر اس کے ساتھ دیگر علامات ہوں جیسے تھکاوٹ سوجن یا پیشاب میں تبدیلیاں آپ کے ڈاکٹر سے ملاقات کریں ۔

نمبر تین پر ۔

ہائی بلڈ پریشر گردے جسم کے اپنے بلڈ پریشر کنٹرول سینٹر کی طرح ہوتے ہیں وہ ہارمونز پیدا کرتے ہیں جو جسم میں سیالوں اور الیکٹرولائٹس کے توازن کو منظم کرنے میں مدد کرتے ہیں جو بلڈ پریشر کو متاثر کرتے ہیں لہذا جب گردے ٹھیک سے کام نہیں کر رہے ہوتے ہیں۔ یہ ایسا ہے جیسے کنٹرول سینٹر ہڑتال پر چلا گیا ہو وہ ہارمونز جو عام طور پر بلڈ پریشر کو کنٹرول میں رکھتے ہیں اپنا کام نہیں کر پاتے جس کی وجہ سے بلڈ پریشر خراب ہو جاتا ہے، بلڈ پریشر میں یہ اضافہ گردوں پر بہت زیادہ دباؤ ڈال سکتا ہے اور گردے کے اندر کی خرابی کو بڑھا سکتا ہے۔ مسئلہ یہ ایک شیطانی چکر کی طرح ہے ہائی بلڈ پریشر گردے کو سخت کام کرتا ہے اور اس سے گردے ناکارہ ہوجاتے ہیں ۔

نمبر چار پر۔

سانس کی قلت گردے کی خرابی سانس لینے میں دشواری کا سبب بن سکتی ہے کیونکہ یوریا جیسے زہریلے مادوں کے جمع ہونے کی وجہ سے خون کا دھارا جو امونیا میں تبدیل ہو جاتا ہے جس کے نتیجے میں سر درد اور سانس لینے میں تکلیف ہوتی ہے اس کے علاوہ گردے کی خرابی بھی خون کی کمی کا باعث بنتی ہے جو اس وقت ہوتی ہے جب خون کے سرخ خلیے جسم کے بافتوں تک آکسیجن پہنچانے کے لیے کافی نہیں ہوتے جس سے سانس کی تھکاوٹ اور کمزوری مزید سیال بن سکتی ہے۔ گردے کی خرابی کی وجہ سے برقرار رہنا پھیپھڑوں میں سیال جمع ہونے کا سبب بنتا ہے جس کی وجہ سے سانس کی قلت ہوتی ہے۔

نمبر پانچ پر۔

مستقل سانس میں بو کا باعث بنتی ہے لیکن سانس کی بدبو مستقل طور پر گردے کی خرابی کی علامت ہو سکتی ہے جب گردے صحیح طریقے سے کام نہیں کر رہے ہوتے ہیں اور خون کے دھارے میں زہریلے مادے جمع ہو جاتے ہیں جو سانس میں امونیا جیسی بدبو کا باعث بنتے ہیں اس کے علاوہ گردے کی خرابی بھی یوریا کا ایک مرکب بن سکتا ہے جو جگر کے ذریعے پیدا ہوتا ہے اور گردوں کے ذریعے خارج ہوتا ہے خون کے دھارے میں یوریا کی اعلیٰ سطح پر ایک ناگوار بو کا باعث بنتی ہے۔

سانس اس لیے اگر آپ نے اپنی سانس کو منٹس کے مسوڑھوں سے تازہ کرنے کی کوشش کی ہے اور اپنے دانتوں کو برش کیا ہے اور یہ برقرار رہتا ہے تو یہ اپنے ڈاکٹر سے چیک کرنے کے قابل ہے جب آپ کے گردے صحیح طریقے سے کام نہیں کر رہے ہیں تو ارتکاز کی کمی ہے اور ان زہریلے مادوں اور فضلہ کی اشیاء جنہیں فلٹر کیا جانا چاہیے تھا۔

نمبر چھ پر ۔

خون کے دھارے میں دیر تک رہتا ہے اور جب یہ زہریلے بہت زیادہ دیر تک رہتے ہیں تو وہ دماغ تک اپنا راستہ بنا سکتے ہیں جیسا کہ جب آپ کسی بدبودار کوڑے دان والے کمرے میں پھنس جاتے ہیں اور کسی اور چیز پر توجہ مرکوز کرنا مشکل ہوتا ہے تو ایسا ہی ہوتا ہے۔ دماغ میں موجود زہریلے مادے آپ کے لیے ارتکاز کو مشکل بنا دیتے ہیں جیسے کہ گردے جسم کے چوکیدار ہیں چیزوں کو صاف رکھتے ہیں اور جب وہ ہڑتال کرتے ہیں تو فضلہ جمع ہو کر دماغ سمیت جسم کے باقی حصوں کو متاثر کرنا شروع کر دیتا ہے۔ آپ کو توجہ مرکوز کرنا مشکل ہو رہا ہے یہ صرف آپ کے گردے کے ساتھ چیک ان کرنے اور کسی بھی بنیادی مسائل کو مسترد کرنے کے لیے ڈاکٹر سے ملاقات کے قابل ہو سکتا ہے ۔

نمبر سات پر۔

نیند میں دشواری گردے ہارمونز کو ریگولیٹ کرنے میں کردار ادا کرتے ہیں اور جب وہ ناکام ہو جاتے ہیں تو یہ ہارمونز کے عدم توازن کا باعث بن سکتے ہیں جیسے جیسا کہ اوربے خوابی کا باعث بنتا ہے گردے کی خرابی بھی عام طور پر یوریا اور کریٹینائن جیسے فضلہ کی مصنوعات کے جمع ہونے سے منسلک ہوتی ہے جو تکلیف کا باعث بنتی ہے اور اسے سونا مشکل بنا دیتا ہے یہ ایسا ہی ہے جیسے واقعی مکمل مثانے کے ساتھ سونے کی کوشش کرنا آپ کا جسم آرام دہ نہیں ہے۔ اس کے علاوہ سونا مشکل ہوتا ہے اس کے علاوہ گردے فیل ہونے والے کچھ لوگوں کو نیند کی کمی کا سامنا بھی ہو سکتا ہے ایسی حالت جس میں کسی شخص کی سانس لینے میں خلل پڑتا ہے جب وہ سوتے ہیں تو رات کو آرام سے سونا مشکل ہو جاتا ہے ۔

نمبر آٹھ پر ۔

متلی اور الٹی جب گردے فلٹر نہیں کر پاتے ہیں۔ خون کو صحیح طریقے سے نکالنا یہ یوریا کریٹینائن اور زہریلے مادوں جیسے فضلہ کی مصنوعات کو جمع کرنے کا باعث بنتا ہے جو متلی اور قے کا سبب بن سکتا ہے یہ ایسا ہی ہے جیسے جب آپ کوئی ایسی چیز کھاتے ہیں جو خراب ہو گئی ہو تو آپ کا معدہ اسے سنبھال نہیں سکتا اور یہ جلدی سے باہر نکلتا ہے جیسا کہ زہریلے مادوں کے لیے ہوتا ہے۔ معدہ اور وہ منہ کے ذریعے جلدی سے باہر نکلتے ہیں گردے کی خرابی بھی جسم میں الیکٹرولائٹس کے توازن کو متاثر کرتی ہے جس کے نتیجے میں معدہ خراب ہوتا ہے ۔

نمبر نو پر ۔

خارش والی جلد گردے کی خرابی خون میں فضلہ جمع ہونے کی وجہ سے جلد پر خارش ہوسکتی ہے۔ جب گردے ٹھیک سے کام نہیں کر رہے ہوتے ہیں تو وہ فلٹر نہیں کر پاتے اور خون کے بہاؤ سے فاضل مادوں کے زہریلے مادوں اور ضرورت سے زیادہ سیالوں کو مؤثر طریقے سے نہیں نکال سکتے کیونکہ یہ فضلہ بنتے رہتے ہیں اور جلد پر خارش محسوس کرتے ہیں جسےکہا جاتا ہے اور الیکٹرولائٹس اور معدنیات کا عدم توازن بھی جلد پر خارش کا باعث بنتا ہے۔ جسم اس وقت ہوتا ہے جب گردے ٹھیک سے کام نہیں کر رہے ہوتے یہ عدم توازن جلد پر اثر انداز ہوتا ہے جس کے نتیجے میں خارش اور خشکی کا باعث بنتا ہے ۔

نمبر دس پر ۔

پٹھوں میں درد گردے جسم میں الیکٹرولائٹس کے توازن کو منظم کرنے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں جب کہ گردے درست طریقے سے کام نہیں کر رہے ہوتے ہیں۔ الیکٹرولائٹس غیر متوازن ہو جاتے ہیں جس کے نتیجے میں پٹھوں میں درد ہوتا ہے مثال کے طور پر پوٹاشیم ایک ضروری معدنیات ہے جو صحت مند افراد میں پٹھوں کے کام میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔

جب گردے مناسب طریقے سے کام نہیں کر رہے ہوتے ہیں تو گردے اضافی پوٹاشیم کو فلٹر اور خارج کر کے خون میں پوٹاشیم کی سطح کو منظم کرتے ہیں۔ پٹھوں کے درد میں کمزوری اور یہاں تک کہ کارڈیک اریتھمیاس کے علاوہ پٹھوں میں درد بھی پانی کی کمی اور یوریمیا کی وجہ سے ہوسکتا ہے ایک ایسی حالت جو خون میں فضلہ کی زیادہ مقدار کی وجہ سے گردے کی خرابی کی وجہ سے ہوتی ہے۔

نمبر گیا رہ پر۔

ٹانگوں کے ٹخنوں اور پیروں میں سوجن جب گردے نہ ہوں۔ صحیح طریقے سے کام کرنے سے وہ خون کو مؤثر طریقے سے فلٹر نہیں کر پاتے اور وہ تمام رطوبتیں اور فضلہ جن کو فلٹر کیا جانا چاہیے تھا، جسم میں جمع ہو جاتے ہیں اور جب یہ رطوبتیں بن جاتی ہیں تو یہ ٹانگوں کے ٹخنوں اور پیروں میں سوجن کا سبب بن سکتی ہیں، ایسا ہی ہوتا ہے جب آپ بہت دیر سے ایک جگہ پر کھڑے ہیں آپ کی ٹانگوں میں سیال جمع ہونا شروع ہو جاتے ہیں اور آپ کو لگتا ہے کہ کینکل ایسا ہی ہوتا ہے جب گردے فیل ہو جاتے ہیں تو وہ ٹانگوں سے رطوبت کو پمپ نہیں کر پاتے اور وہ جمع ہو جاتے ہیں جس کی وجہ سے سوجن ہو جاتی ہے۔

جب بھی یہ علامات ظا ہر ہوں ڈاکٹر سے فوری را بطہ کریں ۔شکریہ۔۔

Spread the love
کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں