اللہ نے مچھروں کو کیوں پیدا کیا؟ جواب آپ کو چونکا دے گا ۔

اللہ نے مچھر کیوں بنائے اس کا جواب جان کر آپ حیران رہ جائیں گے قرآن کا معجزہ مچھر میں ایسی کیا خاص بات ہے کہ طبی تحقیق دیوانہ ہو رہی ہے مچھر کے بنانے میں ایسی کیا خاص بات ہے کہ مطالعہ کر کے دنیا کے راز جان سکتے ہیں یہ کہ اللہ تعالیٰ نے قرآن پاک میں اس کی مثال دی ہے آئیے اس ننھی سی مخلوق کے بارے میں پرانی اور حالیہ تمام باتیں معلوم کر لیں لیکن اس سے پہلے یہاں آپ کے لیے ایک چھوٹی سی چیز ہے کہ وہ نہیں جانتے تھے کہ یہ ان کا آخری رمضان تھا تو کیا بہانہ کریں۔

ہمیں اب اللہ کی کتاب نہیں سیکھنی ہے اس رمضان میں 30 دنوں میں قرآن سے تمام قصے سیکھیں کاپیاں محدود ہیں اور صرف 20 مارچ تک دستیاب ہیں تو ابھی آرڈر کریں جب اللہ نے مکڑی اور چیونٹی کی مثالیں دیں تو کافروں نے بحث کی کہ کیوں؟ اللہ کی ایسی اعلیٰ ہستی اپنی قدرت اور علم کو ثابت کرنے کے لیے ایسی ادنیٰ مخلوق کی مثالیں دیتی ہے جس کے جواب میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے 26 دیکھو اللہ تعالیٰ کو کوئی شرم نہیں آتی کہ مچھر یا اس سے بھی ذلیل چیز کی تمثیل سن کر یہ تمثیلیں اہل ایمان جانتے ہیں۔

کہ یہ ان کے رب کی طرف سے حق ہے جبکہ حق کو مرنے پر تلے ہوئے لوگ کہتے ہیں کہ اللہ ان تمثیلوں کا کیا مطلب ہے اس طرح وہ بہت سے لوگوں کو گمراہ کرتا ہے جس طرح وہ بہتوں کو راہ راست پر لاتا ہے اور اس طرح وہ صرف فاسقوں کو ہی گمراہ کرتا ہے۔ اللہ تعالیٰ کی تخلیق کا ایک مقصد ہے اور ایک گہری حکمت پوشیدہ ہے اللہ تعالیٰ قرآن مجید میں فرماتا ہے کہ ہم نے آسمانوں اور زمین کو پیدا نہیں کیا اور جو کچھ ان کے درمیان ہے وہ محض کھیل کود کے لیے پیدا کیا ہے لیکن ان میں سے اکثر نہیں جانتے کہ آج ہم کیا کریں گے۔ مچھر کی پیدائش میں پوشیدہ ناقابل تصور حکمت اور رازوں پر بحث کی جائے ۔

اور یہ سب کیسے ناقابل یقین حد تک جدید سائنس اور ٹیکنالوجی نے ثابت کر دیا اللہ تعالیٰ نے مچھر کے لیے عربی لفظ استعمال کیا ہے جس سے مادہ مچھر مراد ہے اس کا مطلب یہ ہے کہ وہ مچھر جو انسان کو کاٹتا ہے۔ اور اس کا خون چوسنے والی عورت ہے نر نہیں یہ حال ہی میں انسان نے جدید خوردبین تیار کرنے میں کامیابی حاصل کی ہے جو چھوٹی مخلوق کو زوم کرکے دکھا سکتی ہے کہ مچھر نر ہے یا مادہ اور اس کے بعد ہی ہم اس قابل ہوئے ہیں۔

یہ دریافت کرنا کہ یہ مادہ مچھر ہے جو خون چوستی ہے نر نہیں سبحان اللہ اور قرآن نے 1400 سال پہلے اس چھوٹی سی جاندار کے بارے میں بتایا تھا کہ بظاہر مچھر چھوٹی مخلوق ہے لیکن اتنی چھوٹی جسامت بھی اس کا سارا جسم ہے۔ بڑے بڑے جانوروں کے حصے بالخصوص ہاتھی کے صرف یہ نہیں کہ اس کے دو اضافی حصے اور ساتھ ہی پر اور سینگ بھی ہوتے ہیں لیکن یہ کسی جنگلی جانور سے ہزار گنا چھوٹا ہوتا ہے جس سے اللہ کی قدرت اور جلال ظاہر نہیں ہوتا تو پھر میڈیکل سائنس کے پاس اور کیا ہے؟

حال ہی میں دریافت کیا گیا ہے کہ مچھر کی آنکھیں آنکھوں کی ایک پوری دوسری دنیا کی نمائندگی کرتی ہیں مچھر کی آنکھوں میں سینکڑوں چھوٹے لینز ہوتے ہیں اور یہ اس مخلوق کو حساس اور درست بصارت فراہم کرنے کے لیے بہت بڑی ہوتی ہیں اسی لیے کہا جاتا ہے کہ مچھر کو سو آنکھیں اور یہ سب اس کے سر میں ہیں مچھروں کی تین ہزار سے زائد اقسام ہیں جن میں سے ہر ایک کے مختلف مسکن اور دیگر خصوصیات ہیں اور یہ صرف ایک موٹا اندازہ ہے ہمیں ابھی تک یقین نہیں ہے کہ مچھروں کی کتنی مختلف اقسام ہیں ایک مچھر کے تین ہوتے ہیں۔

دل اور یہ سب تین مختلف قسم کے ہیں اس کے کسی بھی ممالیہ جانور سے 48 دانت زیادہ ہیں مچھر کے تنے میں چھ چھریاں ہیں ہر ایک مختلف مقصد کے ساتھ اس میں کئی جدید حسی نظام ہیں اور اسی طرح یہ اندھیرے میں انسان کی جلد کو پہچانتا ہے۔ تھوک میں ایک بے ہوشی کرنے والا مادہ ہوتا ہے جو جسم کے کاٹنے والے حصے کو مفلوج کردیتا ہے، یہی وجہ ہے کہ جب مچھر ہماری جلد کو کاٹتا ہے تو ہمیں اس کا احساس نہیں ہوتا، مچھروں کے پاس خون کی جانچ کا جدید نظام موجود ہے جس کی وجہ سے وہ ہر کسی کا خون نہیں چوستے۔

خون مچھر کے بارے میں سب سے حیرت انگیز دریافت وہ طفیلی ہے جو مچھر کے پروں پر بیٹھتا ہے جو ہوا سے ہلکا ہوتا ہے تصور کریں کہ ان پر کوئی دوسرا جاندار بیٹھا ہوا ہے یہ طفیلی مچھر سے بھی چھوٹا اور پست ہے اور اسی کے بارے میں اللہ کہہ رہا تھا۔ قرآن مجید میں سورۃ البکرہ میں اللہ تعالیٰ کو مچھر یا اس سے بھی ذلیل چیز کی تمثیل دیتے ہوئے شرم نہیں آتی جب اس نے کہا کہ میں اس سے بھی زیادہ پست ہوں یہ طفیلی وہ ہے ۔

جس کا مطلب یہ ہے کہ مچھروں کو دوسرے کیڑے مکوڑوں اور تخلیق کار مچھروں کے مقابلے میں بہت زیادہ بھوک لگتی ہے۔ اپنے سائز سے کئی گنا زیادہ کھا پی سکتا ہے یہ مچھر ہی تھا جس نے متکبر اور متکبر بادشاہ نمرود کے لیے اچانک اور ذلیل موت کا اعلان کیا اور کہا کہ اگر دنیا کی تمام مخلوقات اکٹھی ہو جائیں تو ایک چھوٹا سا مچھر نہیں بنا سکیں گے۔

Spread the love

اپنا تبصرہ بھیجیں